فلسطین اسرائیل تنازع

دستبرداری کے کچھ ہی دیر بعد غزہ کے ناصر ہسپتال پر اسرائیل کا دوبارہ حملہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

فلسطینی انکلیو کی وزارتِ صحت نے بتایا کہ اسرائیلی افواج نے جمعرات کے روز غزہ کے سب سے بڑے فعال ہسپتال ناصر میڈیکل کمپلیکس سے دستبرداری کے کچھ ہی دیر بعد اس پر چھاپہ مارا۔

عالمی ادارۂ صحت نے کہا ہے کہ خان یونس میں واقع ہسپتال نے چھاپے اور پھر ایک ہفتے کے اسرائیلی محاصرے کے بعد گذشتہ ہفتے کام کرنا بند کر دیا تھا۔ یہ غزہ کا دوسرا بڑا اور علاقے میں صحت کی خراب خدمات کے لیے انتہائی اہم ہے۔

ناصر ہسپتال اسرائیل اور حماس کے درمیان میدانِ جنگ بننے والی صحت کی تازہ ترین سہولت ہے۔ یہ جنگ اب اپنے پانچویں مہینے میں داخل ہو چکی ہے۔

اسرائیل کہتا ہے کہ 2007 سے غزہ کا انتظام چلانے والا مزاحمت کار گروپ حماس ہسپتالوں کو کور کے لیے استعمال کرتا ہے۔ حماس اس کی تردید کرتی ہے اور کہتی ہے کہ اسرائیل کے الزامات صحت کی نگہداشت کے نظام کو تباہ کرنے کا بہانہ ہیں۔

حماس کو تباہ کرنے کے عزم کا اظہار کرتے ہوئے اسرائیل نے فضائی اور زمینی حملے کی صورت میں جواب دیا ہے جس میں غزہ کے حکام کے مطابق 29,000 سے زیادہ فلسطینی جاں بحق اور 69,000 سے زیادہ زخمی ہوئے ہیں۔ جنگ نے انکلیو کے زیادہ تر 2.3 ملین لوگوں کو بے گھر کر دیا ہے اور اس کے زیادہ تر حصے کو ملبے کا ڈھیر بنا دیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں