اسرائیل حماس جنگ بندی مذاکرات کا پانچواں دور دوحہ میں ہوگا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیل کی غزہ میں جنگ رکوانے اور اسرائیلی یرغمالیوں کی رہائی کے لیے مذاکرات کا اگلا دور ایک بار پھر قطری دارالحکومت دوحہ میں ہو گا۔ یہ بات مصر کے سیکیورٹی حکام نے اتوار کے روز بتائی ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ امکانی طور پر دوحہ میں ہونے والے مذاکرات میں جنگ بندی معاہدے کو حتمی شکل دی جاسکے گی۔ واضح رہے یکم دسمبر کے بعد سے مسلسل غزہ میں جنگ جاری ہے اور اسرائیل نے اس بارے میں اپنی ترجیح یہی جاری رکھی کہ اپنے یرغمالوں کو حماس کے ساتھ لڑ کر ہی چھڑوائے گا ۔ مگر یکم دسمبر سے اب تک تیسرا ماہ مکمل ہونے کو ہے جبکہ مجموعی طور پر پانچواں مہینہ مکمل ہونے جارہاہے اور اسرائیل اپنے یر غمالی حماس سے چھڑانے میں بری طرح ناکام ہے۔

تاہم مذاکرات کا موجودہ وقفے وقفے سے جاری سلسلہ ماہ جنوری کے اوآخر میں پیرس سے شروع ہوا تھا جس میں امریکی سی آئی اے کے سربراہ ولیم جے برنز کے علاوہ اسرائیلی انٹیلیجینس چیف ڈیوڈ بارنیا ، قطری وزیر خارجہ شیخ محمد بن عبدالرحمن الثانی اور مصی انٹیلیجنس سربراہ عباس کامل شریک ہوئے تھے ۔

پیرس کے بعد مزاکرات کا دوسرا دور قطر میں ہوا ۔ جس میں تجاویز کو قدرے حتمی شکل دینے کے بعد حماس کے حوالے کیا گیا ۔ حماس نے تقریبا 10 دن تک غور و خوض کیا۔ تاہم یہ مذاکرات کسی نتیجے کی طرف نہ جاسکے ۔

اب تمام ثالث ممالک پیرس میں جمع ہوئے اور اگلی منزل اسی ہفتے دوحہ قرار پائی ہے۔ قطر کے بعد دونوں فریق مصر پہنچیں گے جہاں پر حتمی معاہدے کی تفصیلات طے کی جائیں گی اور معاہدے پر عملی راہیں تلاش کی جائیں گی ۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں