اسرائیل کا "اونروا‘‘ کے تھیلوں سے مارٹر گولے برآمد کرنے کا دعویٰ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی فوج نے دعویٰ کیا ہے کہ اقوام متحدہ کی ریلیف اینڈ ورکس ایجنسی برائے فلسطینی پناہ گزی’اونروا‘کے تھیلوں کے اندر سے مارٹر گولے ملے ہیں۔

اسرائیلی فوج کے ترجمان اویچائی ادرعی نے "ایکس" پلیٹ فارم پر اپنے سرکاری اکاؤنٹ پر ایک ٹویٹ میں کہا کہ غزہ میں تلاشی کےعمل کے دوران کئی عمارتوں میں تلاشی لی گئی جنہیں حماس نے ایک جنگی کمپلیکس میں تبدیل کر دیا تھا۔اس دوران فوجیوں کو بین الاقوامی ایجنسی UNRWA کے تھیلوں کے اندر سے مارٹر گولے اور گولہ بارود ملا۔

ایک ویڈیو کلپ اسرائیلی فوج کے ارکان کو مارٹر گولوں کے تھیلے خالی کرتے ہوئے دکھایا گیا جن کے اندر سے گولہ بارود ملا ہے۔

فلسطینیوں کی ریلیف ایجنسی ’اونروا‘ اس وقت سے تنازعات کا مرکز بنی ہوئی ہے جب اسرائیل نے اس کے 12 ملازمین پر حماس کی طرف سے 7 اکتوبر کو جنوبی اسرائیل پر کیے گئے حملے میں ملوث ہونے کا الزام لگایا تھا۔

ایجنسی نے فوری طور پر ملزم ملازمین کے کنٹریکٹ ختم کر کے اندرونی تحقیقات شروع کر دیں۔ اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیو گوتیرس نے بھی ’اونروا‘ اور اس کی سیاسی "غیر جانبداری" کا جائزہ لینے کے لیے سابق فرانسیسی وزیر خارجہ کیتھرین کولونا کی سربراہی میں ایک کمیشن قائم کیا تھا۔

اس کے بعد امریکا سمیت 16 ممالک نے’اونروا‘ کو دی جانے والی 450 ملین ڈالر کی فنڈنگ معطل کر دی ہے جس کے نتیجے میں ریلیف ایجنسی کافی مشکلات کا شکار ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں