سعودی عرب میں مخصوص شعبوں میں سرمایہ کاری کے 1,600 مواقع

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب میں اقتصادی امور اور سرمایہ کاری کے مطالعہ کے لیے وزارت سرمایہ کاری کے انڈر سیکرٹری سعد الشہرانی نے کہا ہے کہ قومی سرمایہ کاری کی حکمت عملی سے پہلے سرمایہ کاری کے تقریباً 200 مواقع تھے اور آج مختلف معیاری سیکٹرز میں سرمایہ کاری کے تقریباً 1600 مواقع موجود ہیں۔

الشہرانی نے میامی] امریکا] میں ترجیحی سمٹ سے خطاب میں وضاحت کی کہ قومی سرمایہ کاری کی حکمت عملی معیشت کو متنوع بنانے اور اسٹریٹجک سرمایہ کاری کے ذریعے ترقی کی حوصلہ افزائی کے لیے مملکت کے عزم کی نشاندہی کرتی ہے۔

سعودی پریس ایجنسی ’ایس پی اے‘ کے مطابق الشہرانی نے کہا کہ "ہمارا جامع مراعات کا پروگرام بشمول 30 سال کے لیے ٹیکس چھوٹ، مینوفیکچرنگ اور ٹیکنالوجی جیسے اہم شعبوں میں عالمی سرمایہ کاروں کو راغب کرنے اور ان کی مدد کرنے کے لیے مملکت کے عزم کو ظاہر کرتا ہے"۔

انہوں نے مزید کہا کہ "وژن 2030 سے پہلے سعودی معیشت کا بہت زیادہ انحصار تیل پر تھا۔ تنوع کی ضرورت کو محسوس کرتے ہوئے ہم اب اپنی معیشت کو مزید پیداواری اور متنوع بننے کے لیے پرعزم ہیں۔اس میں مینوفیکچرنگ، ٹیکنالوجی، سیاحت، کھیل، تفریح، مصنوعی ذہانت، تعمیرات، جائیداد کی سرگرمیاں، پیٹرو کیمیکل صنعتیں اور دیگر شعبے شامل ہیں"۔

الشہرانی نے اس بات پر زور دیا کہ مقامی سرمایہ کاری کی ترقی سعودی معیشت کا ایک بڑا محرک ہے۔

انہوں نے نشاندہی کی کہ فکسڈ کیپٹل فارمیشن نے سال 2022ء میں 29 فیصد کی نمو حاصل کی اور اسی سال کے دوران غیر ملکی سرمایہ کاری اور غیر ملکی سرمایہ کاری کے سٹاک میں بالترتیب 16 فیصد اور 20 فیصد اضافہ ہوا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں