فلسطین اسرائیل تنازع

غزہ میں جنگ بندی کا مطلب جنگ کا خاتمہ نہیں: اسرائیل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اسرائیل اور حماس کے درمیان قیدیوں کے معاہدے اور غزہ کی پٹی میں جنگ بندی کے حوالے سے پیرس اجلاسوں کی کچھ افشا ہونے والی معلومات کے بارے میں گزشتہ دو دنوں میں محتاط پر امید سامنے آئی۔ دوسری جانب اسرائیلی جنگی کونسل نے جلد ہی ایک وفد قطر بھیجنے کے لیے آمادی کا اظہار کیا ہے جس کا مقصد غزہ میں عارضی جنگ بندی اور قیدیوں کی راہ ہموار کرنا ہے۔

وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو کے قومی سلامتی کے مشیر زاچی ہنگبی نے کل ہفتے کی شام اسرائیلی "N12" چینل کو بتایا کہ "وفد پیرس سے واپس آ گیا ہے، اور شاید کسی معاہدے کی طرف بڑھنے کی گنجائش ہے"۔

جنگ بندی کا مطلب جنگ کا خاتمہ نہیں

اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاھو نے نشاندہی کی کہ "اس طرح کے معاہدے کا مطلب جنگ کا خاتمہ نہیں ہے"۔

یہ بات اس وقت سامنے آئی جب اسرائیلی جنگی کونسل نے کل شام اپنے اجلاس میں پیرس میں ہونےوالے مذاکرات پر غور کرنا تھا۔ اجلاس میں آنے والے دنوں میں وفد کو دوحہ بھیجنے کی منظوری دی گئی۔

تل ابیب کی ایک سڑک پر اسرائیلی قیدیوں کی تصاویر (آرکائیو - ایسوسی ایٹڈ پریس)
تل ابیب کی ایک سڑک پر اسرائیلی قیدیوں کی تصاویر (آرکائیو - ایسوسی ایٹڈ پریس)

موساد کے سربراہ ڈیوڈ برنیا کی سربراہی میں ایک اسرائیلی وفد گذشتہ جمعہ کو پیرس گیا تھا تاکہ جنگ بندی کے مسودے پر عمل کیا جا سکے جس پر جنوری کے آخر میں فرانسیسی دارالحکومت میں ان کے امریکی اور مصری ہم منصبوں اور قطر کے وزیر اعظم کے ساتھ تبادلہ خیال کیا گیا تھا۔

تاہم ان ملاقاتوں کے مناظرکے بارے میں بہت کم تفصیلات سامنے آئیں، کیونکہ معلوم ہوا تھا کہ اسرائیل تمام قیدیوں کو رہا کرنے کے بعد صرف 40 قیدیوں کو رہا کرنے پر راضی ہو سکتا ہے۔

لیکن اسرائیل اب بھی غزہ کی پٹی میں مستقل جنگ بندی کو مسترد کرتا ہے، اور جنگ کے خاتمے کے بعد غزہ میں "حماس کی موجودگی کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے اور مٹانے" پر اصرار کرتا ہے۔

رفح میں حملے کے خطرات

مذاکرات کی پیشرفت کی اس توقع کے ساتھ رفح میں اب بھی حملے کے خطرات منڈلا رہے ہیں۔ اقوام متحدہ اور عالمی برادری نےخبردار کیا ہے کہ اگر رفح میں حملہ کیا گیا تو اس کے نتیجےمیں بڑے پیمانے پر انسانی تباہی ہوگی۔

رفح کا ایک مںظر
رفح کا ایک مںظر

کل ہفتے کو نیتن یاہو نے جنوبی غزہ میں رفح پر حملہ شروع کرنے کی ضرورت کا اعادہ کیا تھا۔

انہوں نے اس بات پر بھی زور دیا کہ وہ رفح میں آپریشنل منصوبوں کی منظوری کے لیے وزراء میں اتفاق رائے پیدا کریں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں