جوہری ایران

ایران کی جوہری صلاحیت کی پیش قدمی، بین الاقوامی جوہری ادارے کی تشویش میں اضافہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

اقوم متحدہ کے تحت جوہری توانائی کے شعبے کو مانیٹر کرنےوالے ادارے نے ایران کی جوہری ہتھیار بنانے کی صلاحیت پر اپنی بڑھتی ہوئی تشویش کا اظہار کیا ہے۔ ایرانی پیش رفت کا اندازہ ملک میں عوامی بیانات سے ہوا ہے۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے ' اے ایف پی' نے پیر کے روز اس سلسلے میں 'بین الاقوامی جوہری ادارے' کی خفیہ رپورٹ کا ذکر کیا جس میں تشویش بتائی جا رہی ہے۔

تہران کے جوہری پروگرام پر 2015 میں عائد کی گئی پابندیوں میں ریلیف کے بدلے میں طے پانے والے معاہدے کے بعد سے ایران اور بین الاقوامی جوہری ادارے کے درمیان کشیدگی بڑھ رہی ہے۔

'بین الاقوامی جوہری ادارے' کے سربراہ رافیل گروسی نے رپورٹ میں کہا ہے 'ایران میں جوہری ہتھیاروں کی تیاری کی تکنیکی صلاحیتوں کے بارے میں عوامی بیانات ایرانی تحفظات کے مکمل ہونے سے متعلق ڈائریکٹر جنرل کے خدشات کو بڑھاتے ہیں۔'

ایران نے جوہری پروگرام کے لیے نگرانی کے آلات کو غیر فعال کر کے 'بین الاقوامی جوہری ادارے' کے ساتھ اپنے تعاون کو کم کر دیا ہے۔

گروسی نے خفیہ رپورٹ میں مزید کہا 'تعمیری و بامعنی کاموں کے ذریعے ہی ان خدشات کو دور کیا جا سکتا ہے۔'

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں