سعودی عرب کی فوڈ اتھارٹی نے اونٹنی کے دودھ کو صحت کے لیے ’محفوظ ‘ قرار دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

سعودی عرب میں فوڈ اینڈ ڈرگ جنرل اتھارٹی نےاونٹنی کے دودھ میں "امراض پھیلانے والے بیکٹیریا" کی موجودگی کے حوالے سے گردش کرنے والی افواہوں کو بے بنیاد قرار دیا ہے۔

فوڈ اینڈ ڈرگ اتھارٹی نے "ایکس" پلیٹ فارم پر اپنے اکاؤنٹ کے ذریعے ایک ٹویٹ میں زور دیا کہ "روگجنک بیکٹیریا" پر "پاسچرائزڈ" اونٹنی دودھ "پر مشتمل افواہوں میں کوئی حقیقت نہیں ہے بلکہ یہ محفوظ دودھ ہے، کیونکہ پاسچورائزیشن کے عمل میں معاون ہے جو آنتوں کو بند کرنے کا سبب بننے والے مائکرو نِگبرڈز کو ختم کرتا ہے۔

فوڈ اتھارٹی کے مطابق یہ عمل دودھ کی خصوصیات کو تبدیل نہیں کرتا اور نہ ہی اس سے اس کے قدرتی غذائی اجزاء کو متاثر کرتا ہے۔ تاہم فوڈ اتھارٹی نے بہت سی بیماریوں سے بچنے کےلیے لیے عام دکانوں سے ملنے والے اونٹنی کے خام دودھ کے استعمال سے گریز کا مشورہ دہا کیونکہ ایسا دودھ آنتوں کے انفیکشن سے لے کر معذوری اور موت کا باعث بھی ہوسکتا ہے۔

یہ قابل ذکر ہے کہ اونٹنی کا دودھ انسانی جسم کو درکار بنیادی غذائی اجزاء کا ایک بھرپور ذریعہ ہے۔ اونٹنی کے دودھ کو صحرا کا سفید سونا کہا جاتا ہے۔ اس کے بہت سے طبی فوائد ہیں۔ اس میں بہت سے اہم معدنیات اور وٹامنز شامل ہیں۔ اس میں گائے کے دودھ کے مقابلے میں زیادہ طبی فوائد ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں