اتھارٹی کی حکومت میں بھی حماس غزہ میں رہے گی: فتح

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

الفتح کے ترجمان جمال نزال نے اس بات کی تصدیق کی کہ اگر اتھارٹی غزہ کی پٹی کو چلاتی ہے تو حماس غزہ میں ہی رہے گی۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ اگلی حکومت کسی دھڑے کی نہیں ہوگی ۔ الفتح یا حماس اس میں شریک نہیں ہوں گی۔

انہوں نے العربیہ کو ایک انٹرویو میں مزید کہا کہ اسرائیلی ٹینک، جس کے بارے میں کچھ دعویٰ کرتے ہیں کہ فتح غزہ میں داخل ہو جائے گی۔ یہ درحقیقت قومی اتھارٹی کے خلاف ہے۔ قبل ازیں آج حماس کے رہنما موسیٰ ابو مرزوق نے تصدیق کی کہ تحریک کو متحد حکومت کی تشکیل کے حوالے سے مختلف دھڑوں سے ناقابل مصالحت خلا نظر نہیں آتا۔

ماسکو میں اجلاس کے فوراً بعد حماس نے کہا کہ روسی دارالحکومت میں فلسطینی دھڑوں کی میٹنگ نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ پی ایل او فلسطینیوں کی جائز نمائندہ ہے۔

دوسری جانب فلسطینی وزیر خارجہ ریاض المالکی سے جب غزہ پر حکمرانی میں فلسطینی اتھارٹی کے کردار کے بارے میں پوچھا گیا تو انہوں نے کہا کہ جس وقت فائرنگ بند ہو جائے گی۔ یہ اتھارٹی اپنے ارکان کے ساتھ واپس آئے گی تاکہ لوگوں کو بنیادی خدمات فراہم کی جا سکیں۔

مستعفی ہونے والے فلسطینی وزیر اعظم محمد اشتیہ
مستعفی ہونے والے فلسطینی وزیر اعظم محمد اشتیہ

انہوں نے ترکیہ کے شہر انطالیا میں ایک سفارتی فورم میں ایک پریس کانفرنس کے دوران مزید کہا کہ یہ ایک ایسی ذمہ داری ہے جو فلسطینی اتھارٹی کے طور پر ہم پر عائد ہوتی ہے اور ہم اسے بغیر کسی اعتراض اور شک کے نبھاتے رہے ہیں اور اسے جاری رکھیں گے۔

واضح رہے فلسطینی اتھارٹی اس وقت مغربی کنارے کے کچھ حصوں پر محدود خودمختاری کے ساتھ حکومت کر رہی ہے۔ اتھارٹی نے 2007 میں غزہ کا کنٹرول حماس سے کھو دیا تھا۔ کچھ اخباری رپورٹس میں پہلے اشارہ کیا گیا تھا کہ امریکی انتظامیہ فلسطینی اتھارٹی پر غزہ پر حکمرانی کی تیاری کے لیے بنیادی اصلاحات کرنے کے لیے دباؤ ڈال رہی ہے۔

گزشتہ ہفتے فلسطینی وزیر اعظم محمد اشتیہ نے اپنی حکومت کا استعفیٰ فلسطینی صدر محمود عباس کو پیش کردیا تھا۔ توقع ظاہر کی جارہی ہے کہ اتھارٹی محمد مصطفیٰ کو ان کے معاشی کام کی تاریخ کی وجہ سے اگلی حکومت کے وزیر اعظم کے طور پر پیش کرے گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں