غزہ کی صورتحال خطے کے لیے بارودی دھماکے کا باعث بن سکتی ہے : وولکر ترک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے چیف وولکر ترک نے کہا ہے 'غزہ میں جاری اسرائیل حماس جنگ کی وجہ سے پورے خطے میں بہت خوفناک لہر آئی ہوئی ہے.' وولکر ترک نے یہ بات پیر کے روز اقوام متحدہ کی ہیومن رائٹس کونسل کی بریفنگ کے موقع پر کہی ہے۔

وولکر ترک نے کہا 'بارود کی شکل اختیار کی ہوئی اس جنگ سے مجھے گہری تشویش ہے۔ یہ وہ بارود ہے جو کسی بھی وقت پھٹ سکتا ہے اور یہ مشرق وسطیٰ اور اس سے باہر ممالک کے لیے بھی بہت سے خطرات لائے گا۔'

وولکر ترک نے کہا' بار بار کی ایمرجنسیوں اور جگہ جگہ کے ہنگامی حالات کا اس طرح وقوع پذیر ہونا ایک بڑے اور حقیقی تصادم کی طرف لے جا سکتا ہے۔ لبنانی ملیشیا حزب اللہ اور اسرائیل کے درمیان کشیدگی بھی ہمارے لئے انتہائی پریشان کن ہے۔'

انسانی حقوق کمیشن کے ہائی کمشنر نے کہا ' اسرائیلی حملوں کے نتیجے میں اب تک لبنان میں 200 ہلاکتیں ہو چکی ہیں جبکہ 90000 شہری بے گھر ہو چکے ہیں۔ اسی طرح علاج معالجے سے متعلق سہولیات اور ہسپتالوں کو بھی ان حملوں کے باعث بہت نقصان پہنچ چکا ہے۔'

ترک نے کہا 'ان حملوں کے دوارن طبی عملے کی ہلاکتوں کے علاوہ عورتوں اور بچوں کی ہلاکتوں کے بارے میں بھی تحقیقات کرائی جانے کی ضرورت ہے۔ نیز اس جنگ کے پھیلاؤ کو روکنے کے لئے ہر ممکن کوششیں کی جانی چاہیے۔'

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں