فلسطین اسرائیل تنازع

قاہرہ مذاکرات میں نمایاں پیش رفت، غزہ میں جنگ بندی کا اعلان 48 گھنٹے میں متوقع

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

مصری سرکاری قاہرہ نیوز ٹی وی نے پیر کو اطلاع دی ہے کہ غزہ کی پٹی میں جنگ بندی تک پہنچنے کے لیے مذاکرات کے دوران "قابل ذکر پیش رفت" دیکھی گئی ہے۔

ٹی وی چینل نے بات چیت کے دوبارہ شروع ہونے کی طرف اشارہ کرتے ہوئے بتایا کہ آج سوموار کو دوسرے دن مصر، حماس، قطر اور امریکہ کے درمیان ہونے والےمذاکرات میں اہم پیش رفت ہوئی ہے۔

مصری، قطری اور امریکی ثالث ہفتوں سے کوشش کر رہے ہیں کہ حماس اور اسرائیل کے درمیان 7 اکتوبر سے جاری جنگ کو روکنے لیے فریقین کے درمیان معاہدہ طے پائے۔

خیال کیا جاتا ہے کہ اس جنگ بندی میں غزہ میں قید یرغمالیوں اور اسرائیلی جیلوں میں قید فلسطینیوں کی رہائی شامل ہے۔

جنگ بندی اور قیدیوں کے تبادلے کے معاہدے کے حصول کے لیے "حتمی رکاوٹوں" پر قابو پانے کی کوششوں میں تیزی کے دورران اسرائیل اور حماس کے درمیان مذاکرات دونوں فریقوں کے لیے ایک "قابل قبول فارمولے" کی تلاش میں "حتمی" مرحلے میں داخل ہو چکے ہیں۔ رمضان المبارک سے قبل جنگ بندی کا اعلان متوقع ہے۔

قاہرہ نیوز چینل کی رپورٹ کے مطابق امریکہ، قطر اور حماس کے نمائندے "جنگ بندی" پر بات چیت دوبارہ شروع کرنے کے لیے قاہرہ پہنچے۔ اگرچہ اسرائیل کی جانب سے اس کی نمائندگی کرنے والے وفد کی حاضری کے حوالے سے کوئی باضابطہ تصدیق نہیں کی گئی۔ اسرائیلی اخبار یدیعوت احرونوت نے رپورٹ کیا کہ حماس کی جانب سے زندہ یرغمالیوں کے ناموں کی مکمل فہرست فراہم کرنے کی درخواست کو مسترد کیے جانے کے بعد تل ابیب نے مذاکرات کا بائیکاٹ کیا۔

ایک باخبر مصری ذریعے نے الشرق الاوسط کو بتایا کہ "(پیرس فریم ورک) کے معاہدے کے بعد سے مذاکرات کے حالیہ دور آسان نہیں تھے۔ اس میں کئی رکاوٹیں تھیں لیکن معاہدے کے تمام نکات اب میز پر ہیں"۔

خبر رساں ایجنسی ’اے ایف پی‘ نے حماس تحریک کے ایک سرکردہ ذریعے کے حوالے سے کل اتوار کو کہا تھا کہ "غزہ میں جنگ بندی کا معاہدہ 24 سے 48 گھنٹوں کے اندر ممکن ہے۔

غزہ میں جنگ بندی کے لیے مذاکرات ایک ایسےوقت میں جاری ہیں جب دوسری جانب غزہ میں حماس اور اسرائیل کے درمیان لڑائی جاری ہے۔ سات اکتوبر سے جاری اور خونی جنگ میں اب تک ہلاکتوں کی تعداد 30,534 ہو گئی ہے۔

دریں اثنا فلسطینی وزارت صحت نے اتوار کو کہا کہ غزہ میں بچوں کی بڑھتی اموات کی بنیادی وجہ پانی کی کمی اور غذائی قلت ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں