حوثیوں کےسوئس پرچم والےجہازپرحملے سے کوئی جانی یامادی نقصان نہیں ہوا :امریکی سینٹ کام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکی سنٹرل کمانڈ کے مطابق حوثیوں کے بحری جہاز پر منگل کے روز کیے گئے میزائل حملے کے نتیجے میں کوئی جانی نقصان نہیں ہوا ہے۔ بلکہ جہاز نے بھی ایک میزائل کے ٹکرانے کے بعد اپنا سفر جاری رکھا اور کسی قسم کی مدد بھی طلب نہیں کی ہے۔ یہ بات امریکہ کی مشرق وسطیٰ میں فوجی امور کی نگران سنٹرل کمانڈ نے اپنے ایک بیان میں کی ہے۔

واضح رہے ایرانی حمایت یافتہ حوثیوں نے منگل کے روز ایک اور یورپی بحری جہاز کو نشانہ بنایا ہے۔ یہ میزائل حملہ صنعا کے مقامی وقت کے مطابق منگل کے روز 2 بج کر 15 منٹ پر علی الصبح کیا۔ یہ جہاز شکن میزائل حملہ تھا جو یمن سے بحیرہ احمر کے جنوب کی طرف کیا گیا۔

پانیوں کے اندر جہاز کو نشانہ بنانے والے ان میزائلوں سے کوئی نقصان نہیں ہوا ہے۔ نہ ہی کسی تجارتی جہاز کو اور نہ ہی کسی امریکی بحریہ کے جہاز کو۔ حوثیوں کے فوجی ترجمان کے مطابق میزائلوں کے ذریعے جہاز کو منگل کے روز نشانہ بنایا گیا ہے اور اس کے لیے متعدد میزائل داغے گئے۔

تاہم امریکی سنٹرل کمانڈ کے بیان کے مطابق نہ کسی جہاز کو نقصان پہنچا ہے اور نہ ہی کوئی شخص زخمی ہوا ہے۔ خیال رہے امریکی سنٹرل کمانڈ اس علاقے میں حوثی مراکز کو بھرپور طریقے سے نشانہ بنا رہی ہے اور اس سلسلے میں یمن پر کئی بار حملے بھی کیے جا چکے ہیں۔ مگر امریکی سنٹرل کمانڈ کا کہنا ہے کہ وہ یہ کارروائیاں اپنے اور تجارتی جہازوں کے دفاع کے لیے کر رہی ہے۔

دوسری طرف ایرانی حمایت یافتہ حوثیوں کا کہنا ہے کہ ان کے یہ حملے غزہ میں جاری اسرائیلی جنگ کے خلاف ردعمل کے طور پر اور فلسطینیوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کے لیے ہیں۔ ان کا یہ بھی کہنا ہے کہ ان کے اولین اہداف میں اسرائیلی جہاز اور اسرائیل کو جانے والے جہاز ہیں اور دوسرا ترجیحی ہدف اسرائیلی و امریکی جہاز ہیں۔ حوثیوں کے خیال میں امریکہ و مغربی ملکوں کی سرپرستی کے بغیر اسرائیل غزہ میں فلسطینی جانوں کو نہ اتنا نقصان پہنچا سکتا تھا اور نہ اس قدر تباہی کر سکتا تھا۔

امریکی سنٹرل کمانڈ کے بیان میں کہا گیا ہے کہ سوئٹزرلینڈ کے پرچم والا بحری جہاز حوثیوں کے کروز میزائل کا نشانہ بنا۔ تاہم صرف ایک میزائل جہاز کو لگا اور اس سے کوئی نقصان نہیں ہوا اور جہاز نے اپنا سفر اپنی منزل کی جانب جاری رکھا۔ گویا سنٹرل کمانڈ نے سب اچھا کی رپورٹ دی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں