فلسطین اسرائیل تنازع

اسرائیل کو رفح میں جارحیت کی اجازت نہیں دی جائے گی: اقوام متحدہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اقوام متحدہ کے انسانی حقوق سے متعلق دفتر نے جمعہ کے روز کہا ہے کہ غزہ کے جنوب میں مصری سرحد پر واقع شہر رفح میں جارحیت کی اجازت نہیں دی جائے گی۔ اگر اسرائیل نے یہ جارحیت کی تو فلسطینیوں کی جانوں کا بہت زیادہ نقصان ہو گا۔ اس لیے یہ نہیں ہونے دیا جائے گا۔

اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے دفتر کے ترجمان جیرمی لارنس نے کہا 'کیا اسرائیل کو یہ موقع دیا جانا چاہیے کہ وہ 15 لاکھ انسانوں کی رہنے کی جگہ یعنی رفح پر منظم جنگی یلغار کرے۔ جہاں پہلے ہی لاکھوں بے گھر ہو کر رہنے والے فلسطینی کسمپرسی کی زندگی گذار رہے ، کیا ان پر ایک اور جنگ مسلط کرنے دی جائے؟'

ترجمان نے کہا ' ایسا کبھی نہیں ہونے دیا جائے گا۔ واضح رہے جمعرات کے روز اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو نے ایک روز پہلے جمعرات کو کہا تھا کہ'رفح پر اسرائیلی حملے کو روکنے کے لیے آوازوں اور دباو کو روکنا ہو گااور رفح پر حملہ کرنا ہوگا۔ یاہو کے مطابق رفح حماس کا آخری مضبوط گڑھ ہے۔ اس کا خاتمہ ضروری ہے۔

نیتن یا ہو نے یہ بھی کہا تھا کہ جو ملک اسرائیل کو رفح پر حملے سے روکنا چاہتے ہیں وہ اسرائیلی فتح کی راہ میں رکاوٹ پیدا کرنا چاہتے ہیں۔

واضح رہے غزہ جنگ کے شروع میں اسرائیل نے فلسطینی عوام کو غزہ کے انتہائی جنوب میں چلے جانے کا کہتے ہوئے بمباری کرکے رفح کی طرف دھکیلتا ہوا لے آیا تھا۔ اب اسرائیل نے اس علاقے میں جنگی یلغار کا اعلان کر چکا ہے۔ جبکہ یہاں بے گھر فلسطینیوں کی تعداد 15 لاکھ کو پہنچ چکی ہے۔

اسرائیل کی طرف سے ممکنہ طور پر رمضان میں مسجد اقصیٰ کی طرف فلسطینیوں کے مارچ کو روکنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اسرائیل نہیں چاہتا ہے مذہبی آزادیوں کے اس سلسلے میں حق کو فلسطیینی بھی استعمال کرسکیں۔ انسانی حقوق کے ترجمان نے کہا 'ہمیں خوف ہے کہ اسرائیل فلسطینیوں کے مشرقی یروشلم میں داخل ہونے پر مزید پابندیاں لگائے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں