لبنان کے سرحدی گاؤں پر اسرائیلی حملہ، پانچ شہری ہلاک اور نو زخمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

لبنان کے سکیورٹی ذرائع نے ہفتے کے روز تادیر بتایا کہ جنوبی لبنان کے ایک سرحدی گاؤں پر اسرائیلی حملے میں پانچ شہری ہلاک اور نو زخمی ہو گئے۔

اکتوبر میں اسرائیل-حماس جنگ شروع ہونے کے بعد تقریباً روزانہ کی بنیاد پر لبنان کی ایرانی حمایت یافتہ حزب اللہ تحریک اور اسرائیل کے درمیان سرحد پار سے ہلاکت خیز فائرنگ کا تبادلہ ہوتا رہا ہے۔

پینٹاگون نے بدھ کو کہا کہ اعلیٰ امریکی فوجی جنرل نے لبنان کی فوج کے کمانڈر سے شرقِ اوسط کی موجودہ سکیورٹی صورتِ حال کے بارے میں بات کی۔

پینٹاگون کی طرف سے ان کی کال کی تحریر کے مطابق جوائنٹ چیفس کے چیئرمین جنرل سی کیو براؤن اور جنرل جوزف عون نے کشیدگی کو کم کرنے کے لیے جاری کوششوں پر بھی تبادلۂ خیال کیا۔

جوائنٹ اسٹاف کے ترجمان کیپٹن جیریل ڈورسی نے کہا، "امریکہ اور لبنان علاقائی سلامتی اور استحکام کے لیے مضبوط مشترکہ عزم رکھتے ہیں۔"

اس جوڑے نے دسمبر میں اسی طرح کی بات چیت کی تھی جب انہوں نے غزہ تنازعے کے لبنان تک نہ پھیلنے کی اہمیت پر تبادلۂ خیال کیا تھا۔ اس وقت جنرل براؤن نے لبنانی مسلح افواج کے لیے امریکی حکومت کی بھرپور حمایت کا اعادہ کیا۔

پینٹاگون اور بائیڈن انتظامیہ کے حکام نے کہا کہ خطے میں ہزاروں امریکی فوجیوں کے ساتھ ساتھ اسرائیل کے ساحل پر جنگی جہازوں کی تعیناتی کا مقصد یہ ہے کہ حزب اللہ اور ایران کے حمایت یافتہ دیگر گروپوں کو اسرائیل کے خلاف دوسرا محاذ کھولنے سے روکا جائے۔

اسرائیلی حملوں کے نتیجے میں کم از کم ایک درجن لبنانی شہریوں کے ساتھ حزب اللہ کے 200 کے قریب مزاحمت کار مارے گئے ہیں۔ حزب اللہ کے حملوں میں مبینہ طور پر کم از کم 10 اسرائیلی فوجی اور متعدد شہری مارے گئے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں