چالیس دن کی جنگ بندی کے دباؤ میں حماس اپنے مطالبات پر قائم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

حماس تحریک کے ایک سینئر سیاسی عہدیدار نے کہا ہے کہ حماس اپنے مطالبات پر قائم ہے۔ خاص طور پر غزہ میں جنگ کے مستقل خاتمے کے مطالبے پر قائم ہے۔ اسرائیل کے ساتھ ایک ایسے وقت میں اب بھی وسیع خلا موجود ہے جب مذاکرات کار جنگ بندی کے بعد دوبارہ مذاکرات شروع کرنے کی تیاری کر رہے ہیں۔ اسرائیل اور حماس کے سخت موقف کی وجہ سے مذاکرات رک گئے۔

عرب مذاکرات کار اتوار کو ملاقات کر رہے ہیں اور اس سے پہلے کی بات چیت سے کہیں زیادہ مختصر جنگ بندی پر زور دینے کا ارادہ رکھتے ہیں۔ اس میں رمضان کے آغاز میں لڑائی میں دو دن کے وقفے کی بھی بات کی جائے گی۔ حماس کے ایک سینئر عہدیدار حسام بدران نے امریکی وال سٹریٹ جرنل کو انٹرویو دیتے ہوئے خبردار کیا کہ مغربی کنارے اور القدس میں بدامنی بڑھے گی اور اس بات پر زور دیا کہ ان کی تحریک مذاکرات جاری رکھنے کے لیے تیار ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہم نے مذاکرات کے خاتمے کا اعلان نہیں کیا؎ ہم اس جنگ کو روکنے کے لیے سب سے زیادہ خواہشمند فریق ہیں۔

حسام بدران جو دوحہ میں حماس کے دفاتر میں خطاب کر رہے تھے نے حماس کی شرائط بیان کیں۔ ان شرائط میں ایک مستقل جنگ بندی، شمالی غزہ میں بے گھر ہونے والے شہریوں کو اپنے گھروں کو واپس جانے کی اجازت، تمام کراسنگ سے مناسب امداد کی فراہمی، غزہ کی تعمیر نو کا منصوبہ، غزہ کی پٹی میں جنگ بندی اور فوج کا انخلا شامل ہیں۔

اسرائیل نے اعلان کیا کہ مذاکرات میں اس کی ترجیح ان درجنوں قیدیوں کی رہائی کو محفوظ بنانا ہے جو 7 اکتوبر کو حماس کے حملوں کے دوران حراست میں لیے گئے تھے۔

غزہ کی پٹی میں لڑائی کو روکنے کے لیے معاہدے تک پہنچنے کی دوڑ ایک نازک وقت پر سامنے آئی ہے کیونکہ اسرائیل نے کہا ہے کہ وہ رفح پر حملہ شروع کر دے گا جہاں دس لاکھ سے زیادہ فلسطینی پناہ کی تلاش میں ہیں۔ اسرائیل کا کہنا ہے کہ حماس کے رہنما رمضان کے مہینے میں وہاں چھپے رہ سکتے ہیں۔ رمضان کا مہینہ القدس میں شدید کشیدگی کا وقت ہو سکتا ہے۔ کیونکہ دسیوں ہزار فلسطینی نقل و حرکت کی پابندیوں کا سامنا کرتے ہوئے سخت اسرائیلی سکیورٹی کنٹرول میں مقدس مقامات تک پہنچنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

عرب ثالث ایک تجویز کو بچانے کی کوشش کر رہے ہیں جس میں 40 دن کی جنگ بندی اور تقریباً 40 قیدیوں کی رہائی شامل ہے۔ بدران نے کہا کہ فلسطینی قیدیوں کے لیے اسرائیلی یرغمالیوں کے تبادلے کے بارے میں ہونے والی بات چیت نے اب انسانی صورت حال کو بہتر کرنے اور لڑائی کو ختم کرنے کے طریقوں سے متعلق سوالات کو راستہ دیا ہے۔ انہوں کہا کہ اسرائیل سے کم از کم 60 یرغمالیوں کی اسیری میں موت ہو گئی ہے۔ عرب ثالثوں کا کہنا ہے کہ حماس نے زندہ یرغمالیوں کے ناموں کی فہرست کے لیے اسرائیل کی درخواست کو مسترد کر دیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں