مکہ معظمہ کی سیدہ عائشہ مسجد جہاں سال بھر عمرہ زائرین نماز ادا کرنے آتے ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مکہ معظمہ کے شمال مغرب میں واقع مسجد ام المومنین سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا مسجد مدینہ منورہ روڈ پر مسجد حرام سے شمال کی طرف 7.5 کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے۔ اسے "مسجد النتعیم" بھی کہا جاتا ہے۔ یہ وہ جگہ ہے جہاں سے اہل مکہ کے زائرین اور عمرہ زائرین احرام باندھتے ہیں۔

ام المؤمنین سیدہ عائشہ مسجد مکہ کی تاریخی مساجد میں ایک خاص مقام رکھتی ہے۔ سال بھر اور چوبیس گھنٹے زائرین مسجد عایشہ میں آتے اور وہاں پر عبادت اور نوافل ادا کرتے ہیں۔

مسجد اس لحاظ سے منفرد ہے کہ اس میں اونچے دروازے اور کھڑکیاں ہیں جو جدید طرز تعمیر کی خصوصیات کے مطابق تعمیر کی گئی ہیں۔ اس کے علاوہ اس کی صداقت اور تاریخ کو مدنظر رکھتے ہوئے جدید اسلامی فن تعمیر کو قدیم آثار قدیمہ کی سجاوٹ کے ساتھ ملایا گیا ہے۔

سیدہ عائشہ مسجد کا اندرونی منظر

کنگ سلمان بن عبدالعزیز چیئر فار سٹڈیز آن دی ہسٹری آف مکہ کے پروفیسر ڈاکٹر عبداللہ بن حسین الشریف نے وضاحت کی کہ اس مسجد کو عمرہ مسجد بھی کہا جاتا ہے۔ کیونکہ مکہ کے لوگ اس مسجد سے احرام باندھ کو حرم مکہ کی طرف جاتے ہیں۔ روایت ہے کہ ام المومنین حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے 10 ھجری کے عمرہ کے دوران اسی جگہ سے احرام باندھا تھا۔

مسجد کا رقبہ 6,000 مربع میٹر ہے اور اس میں تقریباً 15,000 نمازیوں کی گنجائش ہے۔ سعودی عرب کی وزارت مذہبی امور، دعوت و ارشاد مسجد کے تمام تکنیکی امور کی نگرانی کرتی ہے، جس میں دیکھ بھال، آپریشن اور صفائی ستھرائی شامل ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں