وسطی اسرائیل میں چاقو کے حملے میں ایک شخص ’شدید زخمی‘ ہوا ہے: طبی ماہرین

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

طبی ماہرین نے جمعرات کو کہا کہ وسطی اسرائیل میں چاقو کے حملے میں ایک 50 سال سے زائد عمر کا شخص "شدید زخمی" ہوا تھا اور پولیس نے کہا کہ حملہ آور کو "بے اثر کر دیا گیا"۔

میگن ڈیوڈ ایڈوم (ایم ڈی اے) ایمرجنسی سروس نے کہا کہ یہ حملہ بیت کاما کیبٹز کے باہر یروشلم سے تقریباً 55 کلومیٹر (35 میل) جنوب مغرب میں ہوا۔

ایم ڈی اے کے ایک سینئر طبی معاون کلمان گنزبرگ نے ایک بیان میں کہا، "ہم بڑی تعداد میں جائے وقوعہ پر پہنچے، ہم نے ایک زبردست ہنگامہ آرائی دیکھی۔ اور ایک سٹور کے پاس 50 کے عشرے کی عمر کا ایک شخص بے ہوش پڑا تھا اور اس کے جسم پر چھریوں کے زخم تھے۔"

"ہم نے اسے فوری طور پر موبائل آئی سی یو میں پہنچا دیا اور بحالی کا عمل کرتے ہوئے اسے تشویشناک حالت میں ہسپتال لے گئے۔"

ایم ڈی اے نے بتایا کہ متأثرہ شخص کو جنوبی اسرائیل کے بیرشیبا کے ایک ہسپتال میں منتقل کیا جا رہا تھا۔

یہ حملہ ایک دن بعد ہوا ہے جب پولیس نے کہا تھا کہ سائیکل پر سوار ایک 15 سالہ فلسطینی لڑکے کے چاقو کے وار میں دو اسرائیلی سکیورٹی اہلکار زخمی ہو گئے تھے۔

یہ حملہ یروشلم کے جنوب میں ٹنل چیک پوائنٹ پر ہوا اور پولیس نے بعد میں حملہ آور کو مردہ قرار دے دیا۔

اسرائیل غزہ میں حماس کے مزاحمت کاروں کے خلاف جاری جنگ کے درمیان کشیدگی کا شکار ہے جو اب چھٹے ماہ میں داخل ہو گئی ہے۔

یہ جنگ سات اکتوبر کو حماس کے جنوبی اسرائیل پر غیر معمولی حملے سے شروع ہوئی تھی۔

حماس کے زیرِ انتظام غزہ کی وزارتِ صحت کے مطابق مزاحمت کار گروپ کو تباہ کرنے کے لیے اسرائیل کی انتقامی مہم میں 31,341 افراد جاں بحق ہو چکے ہیں جن میں زیادہ تر خواتین اور بچے ہیں۔

ثالثین پیر کو شروع ہونے والے رمضان المبارک کے مقدس اسلامی مہینے سے پہلے لڑائی میں ایک نئی جنگ بندی کی امید کر رہے تھے لیکن اب تک مذاکرات میں کوئی پیش رفت نہیں ہوئی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں