فلسطین اسرائیل تنازع

غزہ کو دنیا کا سب سے بڑا اور کھلا قبرستان بنا دیا گیا ہے : یورپی یونین

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یورپی یونین کے سربراہ جوزپ بوریل نے کہا ہے کہ غزہ کو دنیا کا سب سے بڑا اور کھلا قبرستان بنا دیا گیا ہے۔ برسلز میں یورپی یونین کے وزرائے خارجہ کی میٹنگ میں جوزپ بوریل نے غزہ میں صورتحال کی سنگینی کا تفصیلی ذکر کر رہے تھے۔ وہ اس سے پہلے سلامتی کونسل کے اجلاس میں بھی غزہ کی صورتحال پر بات چیت کرتے ہوئے کہہ چکے ہیں کہ غزہ میں قحط کو اسرائیل جنگی ہتھیار کے طور پر استعمال کر رہا ہے۔

جوزپ بوریل نے کہا 'اس جنگ کے شروع ہونے سے پہلے غزہ ایک کھلی جیل تھی۔ جسے غزہ میں اسرائیلی جنگ نے دنیا کے سب سے بڑے اور کھلے قبرستان میں تبدیل کر دیا ہے۔ اس قبرستان میں ہزاروں فلسطینیوں اور بنیادی انسانی حقوق سے متعلق بین الاقوامی قوانین کو دفن کیا گیا ہے۔'

یورپی یونین کے سربراہ نے پیر کے روز کہا 'اسرائیل انسانی بنیادوں پر غزہ کے لوگوں کے لیے امدادی سامان کی ترسیل میں رکاوٹیں ڈال کر قحط کو جنگی ہتھیار کے طور پر استعمال کر رہا ہے۔ نیز ان رکاوٹوں کے ذریعے اسرائیل قحط کو مزید بڑھا رہا ہے۔'

اسرائیلی وزیر خارجہ کاٹز نے یورپی یونین کے سربراہ جوزپ بوریل کو جواب دیتے ہوئے کہا 'اسرائیل پر حملہ بند کریں اور حماس کے حملوں کے جواب میں اسرائیل کے حق دفاع کو تسلیم کریں۔'

کاٹز نے سوشل میڈیا پلیٹ فارم 'ایکس' پر لکھا 'اسرائیل نے زمینی، فضائی اور بحری راستے کے زریعے انسانی بنیادوں پر امدادی سامان کی ترسیل کی اجازت دی ہے۔ لیکن اقوام متحدہ کے ادارے 'اونروا' کے ذریعے حماس کو تعاون دیا جا رہا ہے۔'

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں