فلسطین اسرائیل تنازع

روزہ اور جنازے: مغربی کنارے میں ماہِ رمضان پر ظلم و تشدد کا سایہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
6 منٹس read

جبکہ بڑھتے ہوئے تشدد نے مسلمانوں کے ماہِ صیام پر ایک طویل سایہ کر ڈالا ہے تو ہسپتال کے ڈائریکٹر وسام بکر نے کہا کہ عموماً رمضان کی راتیں اسرائیل کے زیرِ قبضہ مغربی کنارے میں شدید خطرے سے دوچار ہو گئی ہیں۔

شمال مغربی کنارے کے شہر جنین میں واقع ان کا ہسپتال صفِ اول کے مقامات میں سے ہے جو اس تشدد کے نشانے پر ہیں جو سات اکتوبر کو اسرائیل پر حماس کے بے مثال حملے کے بعد سے غزہ کی پٹی میں تاحال جاری ہے۔

بکر نے کہا، "روزانہ خاندان اور دوستوں کے ساتھ روزہ کھولنے کے بجائے "ہم رات کو باہر نہ جانے کی کوشش کرتے ہیں۔۔ کیونکہ رات کا وقت محفوظ نہیں ہوتا۔"

انہوں نے کہا، اسرائیلی افواج کی طرف سے "کسی بھی وقت حملہ ہو سکتا ہے۔"

جیسا کہ اسرائیل غزہ میں حماس کو ختم کرنے کے لیے اپنی تباہ کن فوجی مہم جاری رکھے ہوئے ہے تو مغربی کنارے میں اسرائیلی افواج یا آباد کاروں کا تشدد - جو جنگ سے پہلے ہی بڑھ رہا تھا - دو عشروں میں بلند ترین سطح پر پہنچ چکا ہے۔

ڈائریکٹر بکر نے کہا، سات اکتوبر سے جنین کے سرکاری ہسپتال میں اسرائیلی چھاپوں میں 44 ہلاک شدہ اور 264 زخمی افراد لائے گئے ہیں۔

متواتر فوجی کارروائیوں کی وجہ سے ہونے والے جانی اور مالی نقصان کے علاوہ فلسطینی مسلح گروپوں کے گڑھ جنین کے رہائشیوں نے کہا کہ تشدد سے سڑکیں خاموش اور ویران، خوشی ختم اور بے چینی پیدا ہوئی ہے۔

محمد عمر نے کہا، سڑکوں پر "کوئی لوگ نہیں ہیں۔" عمر ایک مٹھائی فروش ہیں جنہوں نے اپنی پوری زندگی جینین پناہ گزین کیمپ میں گذاری ہے جو مغربی کنارے کے سب سے زیادہ پرہجوم اور غربت زدہ علاقوں میں سے ایک اور بکثرت اسرائیلی چھاپوں کی جگہ ہے۔

عمر کے مطابق اس سال کے رمضان کا شدید ماحول نہ صرف چھاپوں اور حملوں کے فوراً بعد بلکہ نسبتاً پرسکون دنوں میں بھی محسوس کیا جا سکتا ہے۔

انہوں نے کہا، "بمباری سے خوفزدہ لوگ اپنے گھروں میں رہ رہے ہیں اور ان کے پاس خرچ کرنے کے لیے پیسے نہیں ہیں۔"

حتیٰ کہ اگر انہوں نے ایسا کیا بھی تو انہیں ارد گرد کے علاقوں میں جانے میں کچھ دشواری کا سامنا کرنا پڑے گا کیونکہ کئی گلیوں کو نقصان پہنچا ہے اور اسرائیلی بلڈوزر کی مسماری کے بعد کچھ ناقابلِ رسائی ہو گئی ہیں۔

اسرائیل معمول کے مطابق ان فلسطینیوں کے گھروں کو مسمار کرتا ہے جن پر حملوں کا الزام ہے۔ وہ یہ دلیل دیتا ہے کہ اس طرح کے اقدامات (دہشت گردی سے) باز رکھنے کا کام کرتے ہیں جبکہ ناقدین کہتے ہیں کہ یہ پالیسی اجتماعی سزا کے مترادف ہے۔

بکر نے کہا تشدد اور خوف نے ہسپتال کے عملے کو اپنی لپیٹ میں لے لیا اور رمضان (کی سرگرمیوں) کو بہت زیادہ مخصوص اور محدور کر دیا ہے۔

لاشوں کے اکثر رات کو پہنچنے اور طبی ماہرین کی ہنگامی ضرورت کے پیشِ نظر ان کا کام کافی دباؤ والا ہوتا ہے۔

بکر نے کہا، روزانہ غروبِ آفتاب کے وقت افطار کے بعد گھر پہنچنے کے لیے "آج کل میں جلدی کرتا ہوں کیونکہ میں نہ صرف اپنے بلکہ اپنے بچوں کے لیے بھی ڈرتا ہوں۔"

گذشتہ ہفتے اسرائیلی افواج نے ہسپتال کے اندر دو افراد کو ہلاک کر دیا تھا جسے انہوں نے "مسلح مشتبہ افراد" کے خلاف "انسدادِ دہشت گردی کی کارروائی" قرار دیا۔

بکر کے فون پر محفوظ کردہ فوٹیج میں جینز اور سیاہ سویٹر میں ملبوس ایک مرد محمود ابو الحیجہ کو ایمرجنسی وارڈ کے بالکل باہر گولی مار کر ہلاک کر دیا گیا۔ اور جب دوسرے اسے گھسیٹ کر لے گئے تو فرش پر خون کی ایک چمکیلی لکیر رہ گئی۔

اس شخص کی خالہ فرحہ ابو الحیجہ نے اے ایف پی کو بتایا، وہ "نہ تو مزاحمتی جنگجو تھا اور نہ ہی ہتھیار اٹھانے والا" اور یہ کہ وہ حفاظت کی تلاش میں ہسپتال چلا گیا تھا۔

اے ایف پی کی فوٹیج میں دکھایا گیا ہے کہ آخری رسومات کے لیے مقتولین کی لاشوں کو حماس کے سبز پرچموں میں لپیٹ دیا گیا اور ان کے سروں پر مزاحمت کار گروپ کے مسلح ونگ کی پٹیاں باندھ دی گئیں۔

فرحہ ابو الحیجہ نے کہا وہ عموماً رمضان کا انتظار کرتی ہیں لیکن اب ان کا خاندان اور دیگر افراد "ایک رکن کی کمی محسوس کرتے ہیں"۔

"دکھ، غصہ اور درد ہے۔"

فلسطینی وزارتِ صحت کے مطابق سات اکتوبر سے مغربی کنارے میں اسرائیلی افواج یا آباد کاروں کے ہاتھوں کم از کم 444 فلسطینی جاں بحق ہو چکے ہیں۔

اپنے اہل خانہ کے ساتھ افطار کرنے کا ارادہ کیے ہوئے مخلص ترکمان بدھ کے روز کام سے گھر جا رہے تھے جب انہوں نے ایک زور دار دھماکے کی آواز سنی -- ایک حملہ ہوا تھا جس کے بارے میں اسرائیل نے کہا کہ فلسطینی مزاحمت کاروں کو نشانہ بنایا گیا۔

جب 29 سالہ ترکمان کو معلوم ہوا کہ دھماکے میں تین افراد ہلاک ہو گئے تھے تو انہوں نے اپنا اصل منصوبہ ترک کر دیا اور اس کے بجائے جنین کی گلیوں میں جنازے کے جلوس میں شامل ہونے کا فیصلہ کر لیا۔

اسرائیلی فوج کے مطابق ہلاک شدگان میں ایک اسلامی جہاد کا "کمانڈر" تھا جس پر فوج نے گذشتہ سال ایک مہلک حملے کا الزام بھی لگایا تھا جس میں ایک اسرائیلی شہری ہلاک ہوا تھا۔

جب نوجوانوں نے خودکار ہتھیاروں سے ہوا میں گولی چلائی اور دوسروں نے تینوں لاشوں کو تازہ تیار کردہ قبروں میں اتارا تو ترکمان نے اے ایف پی کو بتایا، "رمضان ایسا کبھی نہیں تھا۔"

انہوں نے کہا کہ وہ "لوگوں کے ساتھ کھڑے ہونے" کے لیے جنازے میں شریک ہوئے۔

"ہم ان کے اہل خانہ کے ساتھ کھڑے ہونا اور انہیں بتانا چاہتے ہیں کہ ہم سب متحد ہیں۔"

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں