خامنہ ای کا دو ٹوک جواب: ’دمشق حملے پر اسرائیل ضرور پچھتائے گا‘

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

دمشق میں ایرانی قونصل خانے کی عمارت پر حملے کی مذمت کے ضمن میں ایران کے حکومتی عہدیداروں کے بار دگر سامنے آنے والے بیانات کے تناظر میں تہران نے منگل کے روز حملے کا بدلہ لینے سے متعلق دھمکی کا ایک مرتبہ پھر اعادہ کیا ہے۔

’اس جرم پر پچھتائے گا‘

ایران کے مرشد اعلیٰ علی خامنہ ای نے منگل کے دھمکی دی ہے ’’کہ تہران، اسرائیل کو دمشق میں اپنے قونصل خانے کو نشانہ بنانے پر قرار واقعی سزا دے گا۔‘‘

ایک بیان میں علی خامنہ ای نے کہا ’’کہ ہمارے بہادر سپوت صہیونی حکومت کو سزا دیں گے۔‘‘ ان کے بہ قول: ’’اسرائیل اپنے اس جرم پر ضرور پچھتائے گا۔‘‘

ادھر ایرانی سپریم لیڈر کے مشیر خاص علی اکبر ولایتی نے یہ بات زور دے کر کہی ہے کہ ’’اس بات سے قطع نظر کہ واشنگٹن کو اس حملے سے متعلق علم تھا یا نہیں، تہران ایرانی قونصل پر حملے میں برابر کا شریک ہے۔‘‘

مقامی ذرائع ابلاغ کے مطابق حالیہ بیانات ایرانی پارلیمنٹ کے سپیکر محمد باقر قالیباف کے بیان کے بعد سامنے آئے ہیں جس میں انہوں نے کہا تھا کہ اسرائیل، ایرانی قونصل خانے کو نشانے بنانے پر شدید ردعمل کا سزا وار ہو گا۔

ادھر ایرانی صدر ابراہیم ریئسی نے بھی ایک بیان میں کہا ہے کہ اسرائیلی حملے کا جواب ضرور دیا جائے گا۔

ایران میں قومی سلامتی نے گذشتہ روز ایک اجلاس کے بعد سامنے آنے والے اعلامیہ میں بتایا ہے کہ ایرانی قونصل کو نشانہ بنانے کے بعد تہران نے مناسب اقدامات اٹھائے ہیں، تاہم اعلامیہ میں ان اقدامات کی تفصیل نہیں بتائی گئی۔

قومی اسمبلی کے سپیکر کا کہنا تھا کہ ایران کا جواب متناسب، فیصلہ کن اور قومی امنگوں کا ترجمان ہو گا۔

ترجمان ایرانی وزارتِ خارجہ ناصر کنعانی نے ایک بیان میں کہا ہے کہ گھناؤنے حملے کے تمام پہلوؤں کی تحقیقات کی جا رہی ہیں اور صیہونی حکومت کو اس کے نتائج کی ذمہ داری اٹھانا ہو گی۔

ترجمان نے اس بات پر زور دیا کہ ایران جارحیت کے جواب کا حق رکھتا ہے اور اس کا فیصلہ خود کرے گا کہ حملہ کرنے والے کو کب سزا دی جائے۔

واضح رہے کہ شام میں ایرانی سفارت خانے کو ایسے موقع پر نشانہ بنایا گیا ہے جب غزہ میں جاری جنگ پر اسرائیل کے وزیرِ اعظم نیتن یاہو کو نہ صرف عالمی دباؤ کا سامنا ہے بلکہ اسرائیل میں بھی بڑے مظاہرے ہو رہے ہیں۔

لگ بھگ چھ ماہ سے جاری غزہ جنگ میں اب تک 32 ہزار سے زیادہ فلسطینی ہلاک ہو چکے ہیں۔ فلسطینی عسکری تنظیم حماس کی جانب سے گزشتہ برس سات اکتوبر کو اسرائیل پر حملے میں 1200 کے قریب افراد ہلاک ہوئے تھے جبکہ حماس نے 200 سے زیادہ کو یرغمال بنا لیا تھا۔

حماس کے حملے کے بعد اسرائیل نے غزہ پر چڑھائی کرتے ہوئے زمینی و فضائی حملے کیے اور یہ حملے بدستور جاری ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں