’ملک حالت جنگ میں اور سارہ نیتن یاھو کوبننے سنورنے سے فرصت نہیں‘

ٹیکس دہندگان کے پیسے سےاسرائیلی خاتون اول کا بیوٹی سیلون ایک نئے تنازعےکا باعث

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو کی اہلیہ نے ایک بار پھر ملک میں تنازعہ کھڑا کر دیا ہے۔یہ تنازعہ یروشلم میں ان کےشوہر کی سرکاری رہائش گاہ سے ملحقہ اپارٹمنٹ میں واقع ہیئر سیلون کی وجہ سے پیدا ہوا۔ اسرائیلی میڈیا کے مطابق اسرائیلی ٹیکس دہندگان کے پیسے سے تیار کردہ یہ ہیئرسیلون عوامی حلقوں میں تنقید کی زد میں ہےاور عوام اسے ناپسندیدگی کی نگاہ سے دیکھ رہے ہیں۔

عبرانی نیوز ویب سائٹ ’واللا‘ نے رپورٹ کیا کہ اپارٹمنٹ اس وقت بڑے پیمانے پر تزئین و آرائش سے گزر رہا ہے، جس میں ہیئر ڈریسنگ کا سامان اور بیوٹی آلات لائے جا رہے ہیں۔ یہ اخراجات ٹیکس دہندگان کے پیسوں سے ادا کیے جا رہے ہیں"۔

اخبار "ہارٹز" نے وضاحت کی ہے کہ سارہ نیتن یاہو کے خلاف "سکیورٹی مسائل اور اعلیٰ سطحی خطرات" کی وجہ سے حکومت نے یروشلم میں وزیر اعظم کی سرکاری رہائش گاہ سے متصل ایک اپارٹمنٹ کرائے پر لیا، تاکہ انہیں اپنے بناؤ سنگھار کے لیے تل ابیب نہ جانا پڑے۔

گذشتہ سال نیتن یاہو کی اہلیہ نے اپنے "ہیئر اسٹائلنگ" کی وجہ سے اسرائیلیوں کے غصے کواس وقت بھڑکا دیا تھا جب تل ابیب میں عدالتی ترامیم کے خلاف ہونے والے مظاہروں کے موقع پر ایک خاتون نے وزیر اعظم کی اہلیہ کو سیلون میں اپنے بالوں کے اسٹائل کرنے کی تیاری کرتے ہوئے دیکھا‘‘۔

خاتون نے سارہ نیتن یاہو کی ایک تصویر سوشل میڈیا پر شیئر کی، جس کے بعد سینکڑوں مظاہرین سیلون کے سامنے جمع ہو گئے۔ مظاہرین شدید مشتعل دکھائی دے رہے تھے۔ اس دوران پولیس اور مظاہرین میں جھڑپیں ہوئیں۔ پولیس نے کم سے کم 71 افراد کو گرفتار کیا اور لاٹھی چارج سے متعدد شہریر زخمی ہوگئے۔

’ملک جل رہا ہے اورسارہ نیتن یاھو کو اپنے بالوں کی فکرہے‘

مظاہرین نے اسرائیلی پرچم اٹھا رکھے تھے اور ان میں سے کچھ نے لاؤڈ اسپیکر پر نعرے لگاتے ہوئے کہا کہ "ملک جل رہا ہے اور سارہ اپنے بال بنا رہی ہے"۔

اس کے بعد پولیس نیتن یاہو کی اہلیہ کو تقریباً 3 گھنٹے تک محاصرے میں رکھنے کے بعد بکتر بند گاڑی میں سیلون سے باہر لے جانے میں کامیاب ہوئی۔

ان واقعات کے بعد نیتن یاہو نے اپنی اہلیہ کے ساتھ ایک دوسرے کو گلے لگاتے ہوئے ایک تصویر پوسٹ کی اور لکھا کہ ’’مجھے خوشی ہے کہ آپ گھر پر ہیں، محفوظ اور صحت مند ہیں، یہ افراتفری رکنے چاہیے‘‘۔

’ہارٹز‘ اخبار نے خبر دی ہے کہ سارہ نیتن یاہو جس سیلون میں پھنسی تھیں اس کے مالک موشے بیٹ بل نے یروشلم میں کرائے پر لیے گئے نئے اپارٹمنٹ کا دورہ کیا اور کہا جاتا ہے کہ یہ نئے وزیراعظم کی اہلیہ کا سیلون ہے۔ .

بیٹ بل نے کہا کہ اپارٹمنٹ کی "تزئین و آرائش نہیں کی گئی اور ایک کیل بھی تبدیل نہیں کیا گیا تھا"۔

2023 میں وزیر اعظم نے وزارت خزانہ سے کہا کہ وہ اپنے اور اپنی اہلیہ کے کپڑوں، کاسمیٹکس اور ہیئر ڈریسنگ کے اخراجات 80,000 شیکل (تقریباً 22,000 ڈالر) اضافہ کرے۔

ملبوسات اور کاسمیٹکس

یہ پہلا موقع نہیں ہے جب سارہ نیتن یاہو سرخیوں میں آئی ہوں۔ اس سے قبل بھی ان پر عوامی پیسے کے غبن اور ضرورت سے زیادہ اخراجات کا الزام لگایا جا چکا ہے۔

سنہ 2019ء میں سارہ نیتن یاھو ان الزامات کو حل کرنے کے لیے ایک درخواست کی ڈیل کو بھی قبول کیا کہ جس میں کہا گیا تھاکہ اس نے عوامی فنڈز میں ایک لاکھ ڈالر کی رقم کو مہنگے کھانوں پر خرچ کیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں