اسرائیلی وزیر گانٹز نے اسرائیل میں قبل از وقت انتخابات کا مطالبہ کردیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیل کی دفاعی کابینہ کے رکن اور پورٹ فولیو کے بغیر وزیر بینی گانٹز نے ستمبر میں عام انتخابات کرانے کا مطالبہ کردیا۔ ان کا یہ اعلان اس وقت سامنے آیا ہے کہ اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو کی حکومت کو غزہ میں جنگ کی وجہ سے اندرون اور بیرون ملک دباؤ کا سامنا ہے۔

بینی گانٹز نے ایک ٹیلی ویژن پریس کانفرنس میں کہا کہ ہمیں جنگ کو شروع ہوئے ایک سال مکمل ہونے سے قبل ستمبر میں انتخابات کے انعقاد کی تاریخ پر اتفاق کرلینا چاہیے۔ ایسی تاریخ طے کرنے سے ہمیں فوجی کوششوں کو جاری رکھنے کی اجازت ملے گی۔ ہمیں چاہیے کہ ہم اسرائیل کے شہریوں کو یہ اشارہ دیں کہ ہم اپنے اوپر ان کے اعتماد کی تجدید کریں گے۔

نیتن یاہو نے قبل از وقت انتخابات کے مطالبات کو مسترد کر دیا۔ اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے اتوار کو دوبارہ قبل از وقت انتخابات کرانے کے مطالبات کو مسترد کرتے ہوئے کہا تھا کہ اس سے ملک کی جنگی کوششوں کو نقصان پہنچے گا۔ نیتن یاہو نے القدس میں ایک پریس کانفرنس میں کہا کہ اب جنگ کے عروج پر فتح سے ایک قدم دور انتخابات کے انعقاد کے مطالبات اسرائیل کو آٹھ ماہ تک یا کم از کم چھ ماہ تک مفلوج کر کے رکھ دیں گے۔ وزیراعظم نے یہ بھی دعویٰ کیا کہ انتخابات یرغمالیوں کے لیے جاری مذاکرات کو پٹری سے اتار دیں گے۔

نیتن یاہو کے مدمقابل

یاد رہے اسرائیلی وزیر بینی گانٹز کے متعلق رائے عامہ کے جائزوں سے پتہ چلتا ہے کہ اگر آج انتخابات ہوتے ہیں تو سیاسی اعتدال پسند کی حیثیت سے وہ وزیر اعظم بننے کے لیے کافی حمایت حاصل کر لیں گے لیکن وہ فلسطینی ریاست کے قیام کے حوالے سے اپنے نقطہ نظر کے حوالے سے ابہام کا شکار ہیں۔ بینی گانٹز سابق وزیر دفاع بھی رے ہیں اور وزیر اعظم نیتن یاہو کے سابق حریف ہیں۔ ان کی نیشنل یونین پارٹی رائے عامہ کے جائزوں میں بڑے مارجن سے آگے ہے۔ دوسری طرف اسرائیلی اتحادی حکومت کی صورت حال نازک دکھائی دیتی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں