اسرائیل نے مسجد اقصیٰ میں گیس بم برسا دیے، کئی نمازی زخمی اور بے ہوش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

آج رمضان المبارک کے جمعۃ الوداع کے موقعے پر اسرائیلی فوج نے مسجد اقصیٰ میں نماز کے لیے آنے والے فلسطینیوں پر ڈرون کے ذریعے گیس بم پھینکےجس کے نتیجے میں متعدد نمازی زخمی اور کئی دم گھٹنے سے بے ہوش۔

فلسطین ٹی وی کے مطابق اسرائیلی پولیس نے مسجد کے صحن میں نمازیوں پر آنسو گیس کے گولے بھی برسائے۔

گذشتہ روز فلسطینی خبر رساں ایجنسی نے اطلاع دی تھی کہ اسرائیلی فوج نے فجر کے وقت مسجد اقصیٰ کے صحنوں میں اعتکاف کرنے والوں کے خیموں پر چھاپہ مارا اور ان میں سے چار روزہ داروں کو گرفتار کر لیا۔ ایجنسی نے عینی شاہدین کے حوالے سے بتایا کہ اسرائیلی پولیس نے معتکفین کے خیموں کی تلاشی لی۔

انہوں نے کہا کہ اسرائیلی فورسز مسجد اقصیٰ سے اعتکاف کرنے کو نکالنے کے لیے کام کر رہی ہیں تاکہ آباد کاروں کو اگلی صبح مسجد پر دھاوا بولنے کا موقع فراہم کیا جا سکے۔

گذشتہ روز ہزاروں فلسطینیوں نے اسرائیلی فوج کی طرف سے عائد پابندیاں توڑ کر مسجد اقصیٰ میں عشاء اور تراویح کی نماز ادا کی تھی۔

یروشلم میں اسلامی اوقاف کے محکمہ نے اطلاع دی ہے کہ 50,000 افراد نے مسجد اقصیٰ میں عشاء اور تراویح کی نمازیں ادا کیں۔

اسرائیلی فورسز کو مسجد اقصیٰ کے دروازوں اور یروشلم کے پرانے شہر میں تعینات کیا گیا اور باب حطہ سے گزرتے ہوئے متعدد نوجوانوں کی تلاشی لی اور ان کی شناخت پریڈ کی گئی۔

قابل ذکر ہے کہ اسرائیلی اقدامات کے نتیجے میں مسجد اقصیٰ میں نمازیوں کی تعداد میں کمی واقع ہوئی ہے جس کے نتیجے میں مغربی کنارے اور غزہ کی پٹی کے شہریوں کو مقبوضہ بیت المقدس پہنچنے سے روکا گیا اور اس کے مختلف محلوں اور اس کے اطراف میں درجنوں چوکیاں کھڑی کی گئیں۔ داخلی راستے اور مسجد مبارک کے دروازوں کے داخلی راستوں کی طرف آنے والے نمازیوں کو روکنے کی کوششیں کی گئیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں