خلاف ورزیوں کی روک تھام کے لیے ’ابشر‘ صارفین جعلی رابطوں سے خبردار رہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی عرب کی وزارت داخلہ نے ٹریفک کی خلاف ورزیوں کو 50 فیصد تک کم کرنے کے لیے’ابشر‘ پلیٹ فارم کے ذریعے سوشل میڈیا سائٹس صارفین کو خبردار کیا ہے کہ وہ کسی بھی فریق کے ساتھ اپنا ڈیٹا اور ڈیجیٹل شناخت ظاہر نہ کریں۔

اس مہینے کے دوران پلیٹ فارم نے "آپ کا استحصال نہ ہو" مہم کا آغاز کیا جس کا مقصد آن لائن فراڈ کے بارے میں بیداری پیدا کرنا اور "ابشر" میں صارف نام اور پاس ورڈ کی رازداری کو برقرار رکھنے اور کسی کو اس نوعیت کی معلومات نہ دینے پر زور دیا۔

اس فیصلے میں سعودی عرب کے شہری، رہائشی اور زائرین سب شامل ہیں۔ ساتھ ہی ساتھ حفاظتی اصولوں پر عمل کرنے اور ٹریفک کی خلاف ورزیوں کا ارتکاب نہ کرنے کی اہمیت پر زور دیا گیا۔اس سے حادثات کی شرح میں کمی واقع ہوگی اور سڑک استعمال کرنے والوں کے تحفظ کو یقینی بنایا جاسکے گا۔

تکنیکی ماہر عبداللہ الصبا نے "ایکس" پلیٹ فارم پر اپنے اکاؤنٹ کے ذریعے کہا کہ خلاف ورزیوں میں کمی کے معاملے سے متعلق دھوکہ دہی پر مبنی کارروائیوں سے ہوشیار رہیں، کیونکہ ایسے لوگ ہوں گے جو اس اقدام کا فائدہ اٹھاتے ہوئے لوگوں کو اپنے فائدے کے لیے دھوکہ دے سکتے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ 9 شوال کو اس میں خود بخود رعایت ہو جائے گی اور آپ کو کچھ کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔ ابشر لنک یا پلیٹ فارم میں داخل نہ ہوں، آپ کو بس انتظار کرنا ہے جب تک ڈسکاؤنٹ براہ راست فعال نہیں ہو جاتا۔

الیکٹرانک فراڈ
الیکٹرانک فراڈ

یہ سب مہمات کیوں؟

حالیہ برسوں کے دوران سعودی شہریوں کو نشانہ بنانے کے بہت سے جعلی طریقے سامنے آئے ہیں۔ 2021ء کے عالمی بینک کے اعداد و شمار کے مطابق سعودی عرب کے پاس عرب دنیا میں کریڈٹ کارڈ رکھنے والوں کی سب سے زیادہ تعداد ہے۔ مورڈور انٹیلی جنس ویب سائٹ کے مطابق پچھلے سال میں ای کامرس کا حجم تقریباً 12 ارب ڈالر تک پہنچ گیا، توقعات کے ساتھ پانچ سال بعد 24 بلین ڈالر تک پہنچنے کی توقع ہے۔ ایسے میں اسے نامعلوم گروہوں کی طرف سے نشانہ بنائے جانے کا خطرہ بناتی ہے"۔

سعودی بینکوں میں بینکنگ انفارمیشن اور آگاہی کمیٹی نے سعودیوں کی جانب سے جعلی اور غیر معتبر ویب سائٹس کے استعمال میں اضافے کے ساتھ ہی الیکٹرانک فراڈ میں اضافے کے خطرے سے خبردار کیا تھا۔اس سے قبل یہ کہا گیا تھا کہ 20 فیصد سے زیادہ سعودی فراڈ اوردھوکہ دہی کا شکار ہوئے ہیں۔

کمیونیکیشنز، اسپیس اینڈ ٹیکنالوجی کمیشن نے دھوکہ دہی والے پیغامات اور لنکس کے بارے میں آگاہی پیدا کرنے کے لیے ٹرولوں کو پسپا کرنے کی اپنی دوسری مہم بھی شروع کی، جس سے صارفین کا ڈیٹا نامعلوم افراد کی جانب سے خطرے اور چوری کا خطرہ ہو سکتا ہے۔ یہ قدم انٹرنیٹ صارفین کو الیکٹرانک فراڈ سے بچانے کے لیےشروع کیا گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں