شام : دھماکے کے نتیجے میں کم از کم سات بچے ہلاک ، ایک خاتون سمیت دو زخمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

شام کے جنوبی صوبہ دراء میں اچانک ہونے والے دھماکے میں سات بچے جاں بحق ہو گئے ہیں ۔ سرکاری ذرائع ابلاغ کے مطابق دھماکہ بارودی مواد کو ' ڈینٹو نیٹر ' سے اڑانے کے نتیجے میں ہواہے۔

دھماکے کے نتیجے میں سات بچے جاں بحق جبکہ دو افراد زخمی ہو ئے ہیں۔ زخمیوں میں ایک شامی خاتون بھی شامل ہے۔ ثنا نامی خبر رساں ادارے نے پولیس ذرائع کے حوالے سے رپورٹ کیا ہے کہ یہ دھماکہ خیز ڈیوائس دہشت گردوں کی طرف سے شامی شہر الصنمين میں نصب کی گئی تھی۔

دوسری طرف ایک شامی 'آبزرویٹری' کے مطابق دھماکے میں مختلف عمروں کے آٹھ بچے ہلاک ہوئے ہیں۔ جبکہ ایک بچہ زخمی بھی ہوا ہے۔ شامی ' آبزرویٹری' انسانی حقوق کے لیے کام کرتی ہے۔

برطانیہ میں قائم مانیٹنگ ادارے کا کہنا ہے کہ یہ دھماکہ خیز ڈیوائس دہشت گرد گروپ کی طرف سے لگائی گئی تھی تاکہ نا معلوم افراد کو نشانہ بنا کر علاقے میں دہشت پھیلائی جا سکے۔

واضح رہے شام 2011 میں شامی صدر بشارالاسد کے خلاف عوامی لہر سے شروع ہونے والی خانہ جنگی کی لپیٹ میں چلا گیا تھا۔ لیکن 2018 سے یہ صورت حال روس کی مدد سے ممکن ہونے والے ایک معاہدے کے نتیجے میں رک گئی تھی۔

تاہم اس جنوبی صوبے دراء میں تب سے قتل و غارت گری کا سلسلہ جاری ہے۔ کئی سال تک جاری رہنے والی اس جنگ کے دوران 507000 شہری ہلاک ہو گئے۔ جبکہ لاکھوں کو بے گھر ہونا پڑا ۔ جنگی صورت حال نے ملک کے انفراسٹرکچر اور صنعتی شعبے کو بھی بری طرح تباہ کیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں