مغربی کنارے میں اسرائیلی بس پر فائرنگ میں ملوث ملزم کی فضائی نگرانی میں تلاش جاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

فلسطین کے مغربی کنارے میں آج اتوار کےروز ایک اسرائیلی بس پرفائرنگ کے واقعے کے بعد علاقے میں سرچ آپریشن جاری ہے۔

بس میں شوٹنگ

اتوار کو اسرائیلی فوج نے اعلان کیا کہ شمالی مغربی کنارے میں قلقیلیہ شہر کے مشرق میں ایک بس پر گولیاں چلائی گئیں۔

فوج نے بتایا کہ فائرنگ کے نتیجے میں کم سے کم دو افراد زخمی ہوئے جس کے بعد علاقے میں کمک بھیجی گئی ہے۔ واقعے کے بعد سڑکیں بند کردی گئیں اور فائرنگ کرنے والے شخص کی تلاش جاری ہے۔

مقامی اسرائیلی میڈیا کے مطابق سکیورٹی فورسز نے قلقیلیہ کے قریب نبی الیاس گاؤں کو گھیرے میں لے لیا اور ایک بس میں گولی چلانے والے کی تلاش شروع کردی۔

رپورٹس میں اس بات کی تصدیق کی گئی ہے کہ قلقیلیہ میں عزون اور نبی الیاس گاؤں کے قریب ایک بس اور آباد کاروں کی گاڑی پر فائرنگ کے حملے میں دو زخمی ہوئے۔

درایں اثناء فلسطینی خبر رساں ایجنسی ’وفا‘نے اطلاع دی ہے کہ اسرائیلی فوج نے قلقیلیہ شہر کی طرف جانے والے مشرقی داخلی راستے کو بند کر دیا اور گاڑیوں کی آمدورفت میں رکاوٹیں کھڑی کیں، جس سے ٹریفک جام ہوگئی۔

اسرائیلی آرمی ریڈیو نےبتایا کہ پیدل افواج ڈرون کی مدد سے فائرنگ کرنےوالے شخص کو تلاش کر رہے ہیں۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ مغربی کنارے میں کشیدگی کی شدت غزہ جنگ کے دوران تیزی سےبڑھتی جا رہی ہے۔ اس علاقے میں آئے روز ہلاکتیں ہوتی ہیں اور اسرائیلی فوج گھر گھر تلاشی کے دوران فلسطینیوں کو گرفتار کررہی ہے۔

گزشتہ ماہ فلسطینی وزارت صحت نےکہا تھا کہ مغربی کنارے میں 420 فلسطینی اسرائیلی فوج کی فائرنگ سے ہلاک ہوئے، جن میں 7 اکتوبر کے بعد آباد کاروں کی فائرنگ سے ہلاک ہونے والے 14 فلسطینی بھی شامل ہیں۔

فلسطینی کلب برائے اسیران نے مغربی کنارے میں گرفتار فلسطینیوںکے اعدادو شمار جاری کیے ہیں۔ گذشتہ چند ماہ کے دوران اسرائیلی فورسزنے غرب اردن سے 7,300 سے زائد فلسطینیوں کو حراست میں لیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں