اسرائیلی کارروائی میں حزب اللہ کمانڈر ہلاک، 'یو این' کی جنگ روکنے کی اپیل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اسرائیلی فضائیہ نے پیر کی صبح حملہ کر کے حزب اللہ کے ایک اور کمانڈر کو ہلاک کر دیا ہے۔ یہ کمانڈر رضوان یونٹ سے وابستہ تھے۔ اس واقعہ کے بعد دونوں طرف سے شدید جھڑپیں شروع ہو گئی ہیں۔ اقوام متحدہ کی طرف سے فریقین سے کہا گیا ہے کہ بمباری کو پھیلنے سے روکے اور تشدد کا فوری خاتمہ کرے۔

اسرائیل اور حزب اللہ کے درمیان اسرائیل کی جنوبی سرحد پر شدید فائرنگ جاری ہے اور یہ سلسلہ غزہ میں شروع ہونے والی اسرائیلی جنگ کے ساتھ ہی شروع ہو گیا تھا۔ خدشہ ہے کہ اسرائیل اور حزب اللہ کے درمیان جنگوں کا یہ سلسلہ مزید وسیع ہوسکتا ہے۔

پیر کی صبح اسرائیی جیٹ طیاروں نے لبنان کے گاؤں 'السطانیہ' پر بمباری کی اور حزب اللہ کے فیلڈ کمانڈر کو دو دوسرے افراد کے ساتھ ہلاک کر دیا۔ واضح رہے حزب اللہ ک ایہ کمانڈر اس کے سپیشل یونٹ رضوان یونٹ سے وابستہ تھا۔ اس واعہ کی اسرائیلی فوج اور لبنان کے سیکیورٹی حکام نے تصدیق کی ہے۔ اسرئیلی فوج نے حزب اللہ کے اس کمانڈر کا نام علی احمد حسین بتایا ہے اور کہا ہے کہ وہ اسرائیل کے خلاف حملوں کی منصوبہ بندی میں شامل رہا۔

حزب اللہ نے اپنے اس کمانڈر کی نماز جنازہ کا اعلان کیا ہے۔ تاہم کمانڈر کے بارے میں کوئی تفصیلات جاری نہیں کی ہیں۔ نہ ہی اسرائیلی فوج کے اس حملے کے بارے میں کچھ تفصیلات کا ذکر کیا ہے۔

خیال رہے 7 اکتوبر سے لے کر اب تک اسرائیلی حملوں میں حزب اللہ کے 270 اہلکاروں کو ہلاک کیا جا چکا ہے۔ جبکہ 50 لبنانی شہری بھی اسرائیلی بمباری کی زد میں آکر ہلاک ہو چکے ہیں۔ ان شہریوں میں طبی عملہ کے ارکان، بچے اور خواتین بھی شامل ہیں۔

اس دو طرفہ بمباری اور گولہ باری سے سرحد کے دونوں طرف ہزاروں لوگ بےگھر ہو کر نقل مکانی پر مجبور ہو چکے ہیں۔ نیز پچھلے چھ ماہ سے جاری اس جنگی صورتحال کے نتیجے میں معیشت پر بھی سخت گہرے اثرات مرتب ہو رہے ہیں۔

اقوام متحدہ نے اس سلسلے میں پیر کے روز ایک مشترکہ بیان جاری کیا ہے۔ جس میں یو این کی لبنان کی رابطہ کار جونا رانکا اور اقوام متحدہ کے امن مشن کے کمانڈر دونوں نے دستخط کیے ہیں کہ فریقین تشدد کو روکیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں