فلسطین اسرائیل تنازع

"سات ہلاکتوں کے مجرم کی تحقیقات قبول نہیں، غیر جانبدارانہ تحقیقات کرائی جائیں"

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ورلڈ سینٹرل کچن کے سربراہ جوز ایندریس نے اپنی سات رکنی ٹیم کی اسرائیلی ڈرون حملوں سے ہلاکت کے بعد اسرائیلی فوج کی طرف سے تحقیقات سامنے آنے پر سخت ترین موقف کا اظہار کیا ہے۔ ان کا کہنا ہے اسرائیلی فوج کی تحقیقات قبول نہیں ہے۔ اس سنگین ترین واقعے کی غیر جانبدارانہ تحقیقات کرائی جائیں۔ کیونکہ مجرم کو خود ہی تحقیقات کرنے کا حق نہیں ہو سکتا ہے۔

اسرائیلی فوج کی طرف سے کہا گیا ہے کہ 'یہ ایک سنگین غلطی تھی۔' اسرائیلی حملے میں 'ورلڈ سینٹرل کچن' کے سات امدادی کارکن مارے گئے تھے۔ جن میں سے تین کا تعلق برطانیہ سے تھا۔ ایک رضاکار دوہری امریکی اور کینیڈین شہریت رکھتا تھا۔ جبکہ باقی امدادی کارکنوں کا تعلق پولینڈ، آسٹریلیا اور فلسطین سے تھا۔ امدادی کارکنوں کو اس کے باوجود نشانہ بنایا گیا ہے کہ ان کی گاڑی پر لوگو موجود تھا۔

اسرائیلی تحقیقات میں بتایا گیا ہے کہ گاڑی کی چھت پر موجود ایک شخص فائرنگ کٍر رہا تھا۔ جس سے شبہ ہوا کہ حماس نے گاڑی کو 'ہائی جیک' کر لیا ہے۔

اسرائیلی تحقیقات رپورٹ سے متعلق جب 'ورلڈ سینٹرل کچن' کے سربراہ سے پوچھا گیا تو ان کا کہنا تھا 'یہ رپورٹ اسرائیلی ڈرون حملے میں 'ورلڈ سینٹرل کچن' کے ہلاک ہونے والے سات مردوں اور عورتوں سے متعلق نہیں ہے۔ '

جوز ایندرس نے مزید کہا 'اسرائیل ہر اس چیز کو نشانہ بنا رہا ہے جو حرکت کرتی ہے۔ یہ جنگ دہشت گردی کے خلاف یا اسرائیلی حق دفاع کے لیے نہیں ہے بلکہ یہ انسانیت کے خلاف جنگ ہے۔'

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں