مشرق وسطیٰ

ایران نے براہ راست حملہ کیا تو ہم فوری جواب دیں گے: اسرائیلی وزیر خارجہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیل نے خبردار کیا ہے کہ اگر ایران نے براہ راست اسرائیل کو نشانہ بنایا تو تل ابیب اس کا فوری جواب دے گا۔

یہ دھمکی آمیز بیان یکم اپریل کو دمشق میں ایرانی قونصل خانے پر اسرائیلی فضائی حملے اور پاسداران انقلاب کے سات اہم کمانڈروں کی ہلاکت کے بعد ایران کی جوابی کارروائی کے امکانات کےتناظر میں سامنے آیا ہے۔

اسرائیل کے وزیر خارجہ یسرائیل کاٹز نے کہا کہ اگر ایران نے تل ابیب پر براہ راست حملہ کرنے کا فیصلہ کیا تو اسے فوری جواب دیا جائے گا۔

کاٹز نے کہا کہ اسرائیل ایران کے ساتھ جنگ نہیں چاہتا لیکن اگر اس پر حملہ کیا گیا تو وہ جواب دے گا۔ انہوں نے کہا کہ اسرائیل نے حزب اللہ اور حوثیوں کی جانب سے میزائل داغنے کے ذرائع کا جواب محدود انداز میں دیا اور اپنی تمام تر صلاحیتوں کو بروئے کار نہیں لایا گیا۔

لبنان کے حوالے سے اسرائیلی وزیر خارجہ نے مزید کہا کہ اگر میزائل لبنان سے تل ابیب کی طرف پرواز کرنے لگیں تو اسرائیل حملے کی جگہ پر طیارے اور فوجی بھیجے گا۔

دو امریکی انٹیلی جنس ذرائع نے بتایا کہ گذشتہ ہفتے شام کے دارالحکومت دمشق میں ایرانی قونصل خانے پر حملے کے جواب میں اسرائیل پر کوئی بھی ایرانی حملہ ممکنہ طور پر خطے میں تہران کے ایجنٹوں کے ذریعے کیا جائے گا۔ایران براہ راست اسرائیل پر حملہ نہیں کرے گا۔

دونوں ذرائع نے بتایا کہ امریکی انٹیلی جنس اندازوں سے پتہ چلتا ہے کہ ایران نے اپنے وفادار مسلح گروپوں پر زور دیا ہے کہ وہ ڈرون اور میزائلوں کے ساتھ ساتھ اسرائیل کے خلاف بڑے پیمانے پر حملہ کریں۔ انہوں نے مزید کہا کہ حملہ اس ہفتے جلد از جلد ہو سکتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں