حماس کی قطر سے ہیڈ کواٹر کی باہر منتقلی کی خبروں میں کتنی صداقت ہے؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

فلسطینی اسلامی مزاحمتی[حماس] کے صدر دفتر کو قطرسے ترکیہ یا کسی اور جگہ منتقل کرنے کے بارے میں بات چیت کی خبروں کی بازگشت ابھی بھی جاری ہے۔ دوسری جانب تحریک کے رہ نماؤں اور ترکیہ کی طرف سے اس معاملے پر مکمل راز داری برتی جا رہی ہے۔ دیگر فلسطینی گروپوں کی جانب سےبھی اس حوالے سے مختلف توقعات کا اظہار کیا جا رہا ہے۔

حماس کے کئی رہ نماؤں نے اس خبر کی تردید کرتے ہوئے کہا کہ ان خبروں میں کوئی صداقت نہیں۔

انہوں نے ’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ کو واضح کیا کہ تحریک نے قطر کو نہیں چھوڑا، بلکہ ان کا خیال ہے کہ دوحہ حماس اور اسرائیل کے درمیان قیدیوں کے تبادلے کے معاہدے کو مکمل کرنے کے لیے جاری ثالثی میں مثبت کردار ادا کر رہا ہے۔

دوسری جانب تحریک فتح سے تعلق رکھنے والے فلسطینی ذرائع نےکہا ہے کہ حماس درحقیقت قطر کو چھوڑ دے گی۔ اس حوالےسے حماس اندرونی اور بیرونی تنازعات کا شکار ہے۔

دریں اثنا فتح کے ترجمان منیر الجاغوب نے ’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ کو بتایا کہ "حماس اور اس کے رہ نماؤں کو ترکیہ سمیت دیگر ممالک میں منتقل کرنے سے قیدیوں کے تبادلے کے حوالے سے مستقبل کے کسی بھی معاہدے کو نقصان پہنچے گا"۔

انہوں نے زور دیا کہ "واشنگٹن مصر اور قطر کی ثالثی کے ساتھ جنگ بندی کے معاہدے اور قیدیوں کے تبادلے کو یقینی بنانا چاہتا ہے"۔

حماس قیادت قطر میں
حماس قیادت قطر میں

حماس کا اگلا ٹھکانہ یمن؟

بعض ذرائع نے توقع ظاہر کی ہےکہ تحریک دوحہ سے نکلنے کی صورت میں ترکیہ نہیں جائے گی بلکہ اس کا اگلا مرکز یمن میں ہوگا اور یہ حوثیوں کے زیرکنٹرول علاقوں میں اپنا مرکز قائم کرے گی۔

اسی دوران کچھ یمنی حوثی رہ نماؤں نے ٹویٹ کیا کہ یمنی سرزمین پر حماس کے رہ نماؤں کے ساتھ ساتھ دیگر فلسطینی دھڑوں کے رہ نماؤں کی موجودگی کا خیرمقدم کیا جائے گا۔

اس تناظر میں عرب فاؤنڈیشن فار ڈویلپمنٹ اینڈ اسٹڈیز کے صدر سٹریٹجک ماہر سمیر راغب نے کہا کہ "یمن حماس کے رہ نماؤں کے لیے قریب ترین سٹیشن ہے کیونکہ وہاں حوثیوں کے علاقے ہیں جو مزاحمت کی حمایت کرتے ہیں اور امریکی اور اسرائیلی موقف کو مسترد کرتے ہیں‘‘۔

انہوں نے ’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ کو دیے گئے بیانات میں حماس کے ترکیہ منتقلی کے امکانات کو مسترد کردیا۔ حماس اور اس کے رہ نما ترکیہ جائیں گے تو انقرہ کے نیٹو اور امریکہ کے ساتھ تعلقات کی نوعیت اور اس کے مفادات متاثر ہوسکتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں