یمن میں ’مسام‘ پروگرام کے تحت 2018ء کے بعد 4لاکھ37 ہزار بارودی سرنگوں کا صفایا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یمن کو بارودی سرنگوں سے پاک کرنے کے پروگرام"مسام" کے ذریعےسنہ 2018ء کے وسط میں یمن میں اپنے کام کے آغاز سے اب تک تقریباً 437,616 بارودی سرنگوں اور مختلف شکلوں میں ان زمینوں میں نصب دھماکہ خیز آلات کوناکارہ بنایا۔ اس کے علاوہ 144,101 اینٹی ٹینک ڈیوائسز اور 6,495 اینٹی پرسنل مائنز کوبھی تلف کیا گیا۔

یمن کے اندر بارودی سرنگوں سے پاک کرنے کے منصوبے "مسام" نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ پروجیکٹ کی انجینیرنگ ٹیموں کے ذریعے نہ پھٹنے والے ہتھیاروں کی کل تعداد جسے ناکارہ بنایا گیا وہ تقریباً 279,002 تک پہنچ گئی۔ بارودی مواد سے نمٹنے کے لیے تشکیل دی گئی ٹیموں نے 8018 دھماکہ خیز آلات کو تلف کیا گیا۔

اسی تناظر میں "مسام" پروجیکٹ کی انجینیرنگ ٹیموں نے اب تک تقریباً 55,503,975 مربع میٹر یمنی اراضی کو صاف کیا ہے جس میں بارودی سرنگوں، نا پھٹنے والے گولوں اور دھماکہ خیز آلات کی تلاش کے بعد اسے کلیئر کیا گیا۔ اس کے ساتھ ساتھ ’مسام‘ منصوبہ یمنی شہریوں میں بیداری کو بہتر بنانےکے لیے کام کررہا ہے۔میڈیا سینٹر کی جانب سے آگاہی پبلیکیشنز کے ذریعے بارودی سرنگوں کے خطرات، مشتبہ اشیاء کو نہ چھیڑنے اور بارودی سرنگوں کو ختم کرنے کی کوششوں کے بارے میں آگاہی فراہم کی جاتی ہے۔

"مسام" پروجیکٹ کی انجینیرنگ ٹیمیں تمام معلوم بارودی سرنگوں کے ساتھ ساتھ حوثی ملیشیا کی جانب سےاپنی لیبارٹریوں میں تیار کردہ مقامی بارودی سرنگوں سے بھی نمٹتی ہیں۔اس کے علاوہ مختلف شکلوں میں بچھائی گئی بارودی سرنگوں، پتھر، لوہے ، کنکریٹ اوردیگرشکلوں کی اشیاء کو چھیڑنے سے شہریوں کو منع کیا گیا۔

’مسام‘ پروجیکٹ یمنی علاقوں کو بارودی سرنگوں سے پاک کرنے کے لیے نے ان قابل ذکر چیلنجوں کا انکشاف کیا۔ پروگرام نے کہا کہ حوثی ملیشیا نے یمن میں بڑی تعداد میں مختلف اشکال کی بارودی سرنگوں کا جال بچھایا ہے انہیں ختم کرنے کے لیے مزید وقت اور وسائل درکار ہوں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں