شامی سرحد کے نزدیک امریکی فوجی اڈے پر عراق سے حملہ ، پانچ راکٹ فائر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

عراقی قصبے زومر سے شام میں قائم امریکی اڈے کی طرف کم از کم پانچ راکٹ فائر کیے گئے ہیں۔ فوری طور پر کسی جانی نقصان کی تصدیق نہیں کی گئی ہے۔ امریکی فوجی اڈے پر یہ حملہ ماہ فروری کی اوئل میں جنگجو گروپوں کے روک دیے گئے حملوں کے بعد پہلی بار سامنے آئے ہیں۔

راکٹ حملوں کی عراق میں کم از کم دو سیکیورٹی ذرائع نے تصدیق کی ہے۔ اسرائیل اور ایران کے درمیان کشیدگی کی تازہ صورت حال میں راکٹوں کا عراق سے ایک بار پھر داغا جانا اہم ہے۔ خصوصا ایسے حالات میں جب عراقی وزیر محمد السوڈانی امریکہ کے دورے سے محض ایک روز قبل ہی واپس آئے ہیں۔ السوڈانی نے اپنے امریکی دورے کے دوران صدر جوبائیڈن سے ملاقات بھی کی ہے۔

ایک سیکیورٹی ذریعے کا کہنا ہے کہ ان پانچ داغے گئے راکٹوں میں سے ایک چھوٹے ٹرک پے پیچھے رکھا گیا تھا۔یہ ٹرک عراق کے شامی سرحد ڈے جڑے قصبے زومر میں موجود تھا جہاں سے راکٹ فائر کیا گیا۔

فوجی حکام کا کہنا ہے , حملے کے بعد اسی ٹرک کو آگ نے اپنی لپیٹ میں لے لیا۔ یہ آگ ایک اور راکٹ سے بھڑکی تھی۔ اسی دوران فضا میں ایک جہاز بھی نمودار ہوا تھا۔
تاہم فوجی ذرائع کا کہنا ہے کہ ہم یہ تصدیق کر سکتے کہ یہ آگ بھڑکنے کا واقعہ جہاز سے کسی بمباری کی وجہ سے پیش ایا یا کوئی اور وجہ بنی۔ بنا تحقیق یہ کہنا یہ بھی مشکل ہے کہ ٹرک کو آگ نے امریکی بمباری کے نتیجے میں لپیٹ میں لیا تھا۔ ایک فوجی ذریعے نے کہا ہم اس حساس اہمیت کے حامل ہے اس لیے بلا تحقیق بات نہیں کر سکتے۔

اطلاعات کے مطابق اس علاقے میں عراقی فوج تعینات کر دیا گیا ۔تاکہ حملے کرنے والوں کا پیچھا کریں۔ بتایا گیا ہے کہ جنگجو ایک اور گاڑی پر فرار ہو ئے ہیں۔ جن کی تلاش کی جارہی ہے۔

عراقی سیکیورٹی سے متعلق اطلاعات رسانی کے لئے قائم ادارے کے مطابق عراقی فوج نے علاقے وسیع پیمانے پر سرچ آپریشن شروع کر دیا ہے۔اور ذمہ داروں کو پکڑنے کے لئے جگہ جگہ پہنچ رہے ہیں۔

یہ آپریشن شامی سرحد سے جڑے علاقے میں جاری ہے۔ فوجی بیان کے مطابق راکٹ حملے کے ذمہ داروں کی تلاش جاری ہے اور انہیں قانون کے کٹہرے میں لایا جائے گا۔

فوجی حکم کا کہنا ہے کہ جس ٹرک سے راکٹ فائر کیا گیا تھا۔اس ٹرک کو قبضے میں لے لیا گیا ہے اور واقعے کی تحقیقات جاری ہیں۔ ابتدائی اطلاعات کے مطابق اس راکٹ حملے کے دوران ہی جہاز سے کی گئی بمباری سے ٹرک کو نقصان بھی ہوا ہے۔ فوجی حکام کے مطابق علاقے میں موجود امریکی و اتحادی فورسز سے بھی رابطے میں ہیں۔ ایک دوسرے کو اپ ڈیٹ رکھا جارہا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں