اس سال 90 ہزار ایرانی عازمین فریضہ حج ادا کریں گے: ایرانی سفیر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سوموار کو مدینہ منورہ کے شہزادہ محمد بن عبدالعزیز بین الاقوامی ہوائی اڈے پر ایران سے عازمین حج کو لے کرپہلا طیارہ پہنچا۔ یہ طیارہ نو سال کے تعطل کے بعد عازمین کو لے کرمدینہ منورہ پہنچا ہے۔اس سے قبل ایران اور سعودی عرب کے درمیان سفارتی کشیدگی کے دوران ایران کا کوئی مسافر جہاز مدینہ منورہ نہیں آیا۔

اسی حوالے سے سعودی عرب میں ایرانی سفیر علی رضا عنایتی نے "العربیہ" چینل پر چار بجے کے بلیٹن میں گفتگو کے دوران اس قدم پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ یہ قدم سعودی عرب اور ایران کے درمیان تعلقات کی بہتری کا اشارہ ہے جو گذشتہ سال مارچ میں بیجنگ میں دونوں ممالک کے وزرائے خارجہ کے درمیان طے پائے تھے۔اس میں دونوں ممالک کے درمیان براہ راست پروازوں کی واپسی اور کئی عمرہ پروازیں شامل ہیں۔ آج ہم ایرانی شہریوں کو سعودی عرب میں عمرہ کرنے کے لیے آتے دیکھ رہے ہیں۔ یہ پروازیں 20 دن تک جاری رہیں گی، جس سےعازمین حج کی کل تعداد 6000 ایرانی زائرین تک پہنچ جائے گی۔

اس سال ایرانی عازمین کے حوالے سے عنایتی نے کہا کہ جمہوریہ ایران میں حج و وزٹ آرگنائزیشن اور سعودی عرب میں اسلامی امور کے وزیر کے درمیان ایک معاہدہ طے پایا ہے۔ اس معاہدے کے تحت ایران کے 90 ہزار عازمین کو فریضہ حج کی اجازت دی گئی ہے۔

یہ بات قابل غور ہے کہ حالیہ عرصے کے دوران سعودی عرب اور ایران نے تعلقات کو فروغ دینے اور "بیجنگ معاہدے" پر عمل درآمد کی طرف قدم اٹھاتے ہوئے دونوں ممالک میں اپنے سفارتخانے دوبارہ کھولے اور تمام شعبوں بالخصوص سکیورٹی اور اقتصادی تعاون بڑھانے پر اتفاق کیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں