عالمی فوجداری عدالت گرفتاری وارنٹ کی درخواستوں پرایکشن لیتی ہےتو نیتن یاھوکا کیاہوگا؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
5 منٹس read

اسرائیلی حکومت دی ہیگ میں قائم عالمی فوج داری کی طرف سے متوقع پابندیوں سے خوفزدہ ہے۔خیال کیا جاتا ہے کہ بینجمن نیتن یاہو اور دیگر سینئر اسرائیلی حکام کے خلاف دی ہیگ میں بین الاقوامی فوجداری عدالت جنگی جرائم کے ارتکاب کے الزام میں گرفتاری کی ہدایت دے سکتی ہے۔

لیکن اس حوالے سے کچھ بھی کہنا قبل از وقت ہے کیونکہ فوجداری عدالت نے اس سلسلے میں اپنے منصوبوں کو خفیہ رکھا تاہم اسرائیلی وزیر اعظم کے پاس فکر مند ہونے کی معقول وجہ ہے۔ کیونکہ اس سے قبل اسی نوعیت کے الزامات روسی صدر ولدی میر پوتین پر یوکرین جنگ کے دوران لگ چکے ہیں۔

بین الاقوامی فوجداری عدالت کے پراسیکیوٹر کریم خان (رائٹرز)
بین الاقوامی فوجداری عدالت کے پراسیکیوٹر کریم خان (رائٹرز)

خطے کے اپنے دو حالیہ دوروں کے دوران پراسیکیوٹر کریم خان نے اس بات پر زور دیا کہ غزہ میں فلسطینی شہریوں کو بنیادی خوراک، پانی اور طبی سامان ملنا چاہیے جس کی انہیں مزید تاخیر کے بغیر اور بڑے پیمانے پر ضرورت ہے۔ یہ بین الاقوامی انسانی قانون کی ضرورت ہے۔

انہوں نے اسرائیلی حکومت کو خبردار کیا کہ وہ اس پر غزہ میں شہریوں کو خوراک اور امداد کی فراہمی میں کوتاہی نہ برتے۔ یہ وہ مطالبہ ہے جس کی دنیا کی بیشتر حکومت جن میں امریکہ، برطانیہ اور اقوام متحدہ کی مبصر فلسطینی ریاست بھی شامل ہیں۔

انہوں نے کہا کہ یہ حیران کن نہیں ہے کہ کریم خان مبینہ طور پر نیتن یاہو کے ساتھ ساتھ وزیر دفاع یوآو گیلنٹ اوراسرائیلی آرمی چیف ہرزی ہیلیوی کے خلاف "غزہ میں فلسطینیوں کو جان بوجھ کر بھوکا مرنے" کے الزامات پر دباؤ ڈالیں گے۔

یہ وہی کریم خان ہیں جنہوں نے روسی صدر ولادیمیر پوتین کو یوکرین جنگ میں یوکرین کے بچوں کو اغوا کرنے کا الزام لگایا تھا۔

امکان ہے کہ کریم خان نیتن یاہو کے خلاف مزید پیچیدہ الزامات کی طرف جانے سے پہلے غزہ میں براہ راست الزامات کے ساتھ شروع کریں گے۔

بین الاقوامی فوجداری عدالت
بین الاقوامی فوجداری عدالت

چونکہ اسرائیلی حکومت نے ’آئی سی سی‘ کے عملے کو غزہ میں داخل ہونے کی اجازت دینے سے انکار کر دیا ہے۔اس لیے خان کو اسرائیل کے دیگر ممکنہ جنگی جرائم کو ثابت کرنے کے لیے درکار تفصیلی تحقیقات کو مکمل کرنے میں کچھ وقت لگے گا جن میں شہری علاقوں پر اندھا دھند بمباری اور غیرمتناسب شہری نتائج کے ساتھ فوجی اہداف پر گولی چلانا جیسے واقعات ہیں۔

آگے کیا ہو گا؟

برطانوی اخبار’دی گارڈین‘ کی ایک رپورٹ کے مطابق اسرائیلی حکومت نیتن یاہو یا ان کے نائبین کو مقدمے کے حوالے سے ان کا سفر اچانک محدود ہو گیا ہے۔

اگرچہ اسرائیلی قیادت کے یورپی سفر پر اثر نہیں پڑا۔

اس سے واشنگٹن اورلندن کے لیے یہ بہانہ کرنا بھی مشکل ہو جائے گا کہ اسرائیلی فوج کو مسلسل مسلح کرنا جنگی جرائم میں حصہ نہیں ڈالتا۔

مزید الزامات کا پہلا دور مزید کا ایک واضح خطرہ ہوگا۔

نیتن یاہو غزہ کی پٹی کے سب سے جنوبی شہر رفح پر ممکنہ حملے پر غور کر رہا ہے جہاں 1.4 ملین فلسطینیوں کے رہنے کے باوجود انہیں اس بات پر فکر مند ہونا چاہیے کہ آیا مزید شہریوں کی ہلاکتیں کریم خان کو غلط اطلاع دینے والے اسرائیلیوں کی تحقیقات کو تیز کرنے پر مجبور کر دیں گی۔

’آئی سی سی‘ نہ صرف سابقہ انصاف فراہم کرنے بلکہ مستقبل میں جنگی جرائم کی روک تھام میں بھی اپنی صلاحیت کے مطابق کام کر سکتا ہے۔

عدالت کے اختیارات کیا ہیں؟

بین الاقوامی فوجداری عدالت ایک آزاد عدالتی ادارہ ہے جو نسل کشی، انسانیت کے خلاف جرائم اور جنگی جرائم میں ملوث افرادکے خلاف کارروائی کا ختیار رکھتا ہے۔

حالیہ عرصے کے دوران عدالت نے اس بنیاد پر روسی صدر کے خلاف گرفتاری کا وارنٹ جاری کیا کہ وہ جنگی جرائم کے ذمہ دار ہیں۔ یہ ایک آخری حربہ ہے کیونکہ یہ صرف اس وقت مداخلت کرتا ہے جب قومی حکام جرائم کو روکنے میں ناکام ہوں یاروکنا نہیں چاہتے۔

سابقہ یوگوسلاویہ اور روانڈا کے لیے بین الاقوامی فوجداری ٹربیونلز نے انسانیت کے خلاف جرائم کے لیے افراد پر مقدمہ چلایا۔

تاہم عدالت کے پاس مشتبہ افراد کا سراغ لگانے اور گرفتار کرنے کے لیے اپنی پولیس فورس نہیں ہے۔ اس کے بجائے اسے گرفتاریاں کرنے اور ان کی ہیگ منتقلی کے لیے قومی پولیس خدمات پر انحصار کرنا پڑتا ہے۔

عدالت کے کام اور اختیارات کے بارے میں ’بی بی سی‘ کی طرف سے پہلے شائع کی گئی ایک تفصیلی رپورٹ کے مطابق پبلک پراسیکیوٹر تحقیقات کا آغازتب کرتا ہے جب مقدمہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل یا عدالت کے کسی رکن ملک کے ذریعے اس کے حوالے کیا جاتا ہے۔

یہ آزادانہ کارروائی بھی کرسکتا ہے، لیکن استغاثہ کی منظوری ججوں کے پینل سے ہونی چاہیے جہاں پراسیکیوٹر اور جج دونوں کا انتخاب عدالت میں شریک ممالک کے ذریعے کیا جاتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں