فلسطین اسرائیل تنازع

اسرائیل نے وجہ بتائے بغیررفح پرحملہ کرنے کے لیے تعینات کیے گئے ریزرو فوجیوں کوہٹا دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

غزہ کی پٹی کے جنوب میں واقع شہر رفح پر آئندہ اسرائیلی حملے کے بارے میں بات چیت ابھی تک جاری ہے تاہم اس کی ابھی تک وضاحت نہیں کی گئی۔

فوجیوں کی برطرفی

اسرائیلی وزیر اعظم کے دفترنے اعلان کیا کہ رفح پر حملے کے لیے تیاری جاری ہے۔ کسی معاہدے سے رفح کا حملہ مشروط نہیں ہوگا۔

اسرائیلی میڈیا نے اطلاع دی ہے کہ اسرائیلی فوج نے کچھ ریزرو فوجیوں کو ہٹا دیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ آج جن فوجیوں کو غیر فعال کیا گیا ہے انہیں ممکنہ رفح آپریشن میں حصہ لینے کے لیے تفویض کیا گیا ہے۔

ذرائع نے کوئی نئی تفصیلات یا برطرفی کے فیصلے کی وجوہات کا بیان بھی ظاہر نہیں کیا۔

یہ پیش رفت امریکی اور اسرائیلی حکام کی طرف سے اس انکشاف کے بعد سامنے آئی ہے جس میں وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو نے امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلنکن کو بتایا کہ وہ ایسے معاہدے کو قبول نہیں کریں گے جس میں غزہ کی پٹی میں جنگ کا خاتمہ شامل ہو۔

اسرائیل پر حماس کے حملے کے بعد مشرق وسطیٰ کے اپنے ساتویں دورے پر بلنکن نے بدھ کے روز نیتن یاہو سے ان کے دفتر میں ڈھائی گھنٹے اکیلے ملاقات کی۔

منگل کو اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے اعلان کیا کہ رفح سے شہریوں کو نکالنے کا عمل شروع کر دیا گیا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ رفح پر حملہ ہر صورت میں ہوگا چاہے حماس کے ساتھ قیدیوں کا تبادلہ ہویا نہ ہو۔

انہوں نے کہا کہ اسرائیل حماس کو ختم کرنے کے لیے رفح میں داخل ہو گا چاہے قیدیوں اور غزہ میں جنگ بندی کے حوالے سے کوئی معاہدہ ہو یا نہ ہو۔

انہوں نے مزید کہا کہ "مقاصد کے حصول سے پہلے جنگ کو ختم کرنے کا خیال کوئی آپشن نہیں ہے"۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں