انٹونی بلنکن کے دورہ کرم شالوم راہداری کے موقع پر اسرائیلی ٹینکوں کی گولہ باری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلنکن جن کا دورہ اسرائیل شروع ہونے سے پہلے اسرائیلی فوج نے رفح پر بمباری کر کے اپنی فوجی طاقت اور جنگی گھن گرج کا اظہار کرتے ہوئے کئی فلسطینیوں کو ہلاک کر دیا تھا۔ بدھ کے روز بھی ان کے اسرائیل میں ہوتے ہوئے غزہ میں ٹینکوں کے گولے برسانے کی آوازیں ان کی سماعت سے ٹکراتی رہی ہیں۔ یہ موقع تب بنا جب بلنکن نے غزہ میں امدادی سامان کی ترسیل کے لیے بند کی جا چکی اسرائیلی راہداری کرم شالوم پہنچے۔

امریکی وزیر خارجہ موٹی کنکریٹ سے بنی دیواروں میں گھری اس کرم شالوم راہداری میں موجود تھے کہ اسی دوران غزہ میں اسرائیلی ٹینکوں کی گولہ باری سے گڑ گڑاہٹ شروع ہو گئی۔ خیال رہے کرم شالوم راہداری شمالی غزہ سے محض چند سو میٹر کے فاصلے پر ہے۔

تاہم اسرائیل نے یہ راہداری سات اکتوبر کے بعد اس وقت بند کر دی تھی، جب اسرائیل نے غزہ کی سخت ناکہ بندی کا فیصلہ کیا تھا۔ لیکن پچھلے سال دسمبر میں اسے محدود تر نقل و حمل کے لیے دوبارہ کھولا گیا تھا جس کے بعد اسے دوبارہ بند کر دیا گیا۔ مصر کے ساتھ سرحد پر کرم شالوم اور قریبی رفح راہداری کے ساتھ ساتھ، اسرائیل نے حال ہی میں کہا ہے کہ وہ امدادی نقل و حمل کے لیے کرم شالوم راہداری کو کھول رہا ہے۔

امریکی وزیر خارجہ اسرائیلی دورے کے موقع پر وزیر دفاع یووا گیلنٹ کے ہمراہ کرم شالوم کا معائنہ کر رہے تھے۔ تاکہ امدادی سامان کی غزہ میں ترسیل میں رکاوٹیں کم ہونے کی امید پیدا کر سکیں۔

جب بلنکن شالوم کا دورہ کر رہے تھے تو ڈبہ بند چنے، چاول، آلو اور ٹوائلٹ پیپر کی بوریاں، کچھ پر اقوام متحدہ کے ورلڈ فوڈ پروگرام اور ' ورلڈ سینٹرل کچن ' کے امدادی گروپ کے ٹھپے لگا کر رکھی ہوئی تھیں۔

جبکہ خودکار ہتھیاروں سے مسلح اسرائیلی فوجی اس علاقے میں گھوم رہے تھے جسے انسپکشن سیل کہا جاتا ہے۔ اسرائیل نے یہ ظاہر کرنے کی کوشش کی ہے کہ وہ غزہ کی امداد کو روک نہیں رہا ہے، خاص طور پر جب سے صدر جو بائیڈن نے وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو کو سخت انتباہ جاری کیا، کہا کہ اگر اسرائیل شہری نقصان، انسانی مصائب اور حفاظت کے لیے اقدامات کرنے میں ناکام رہتا ہے تو واشنگٹن کی پالیسی بدل سکتی ہے۔

امریکی دفتر خارجہ کے ترجمان میتھیو ملر نے کہا ہے کہ اس سے قبل بدھ ہی کے روز بلنکن نے نیتن یاہو کی صدر جوبائیڈن کے ساتھ 4 اپریل کو ہونے والی ٹیلیفون کال کے بعد سے غزہ کو انسانی امداد کی فراہمی میں بہتری پر تبادلہ خیال کیا اور امداد فراہمی کو تیز کرنے اور اسے برقرار رکھنے کی اہمیت کا اعادہ کیا۔

انٹونی بلنکن نے کہا کہ اسرائیل کو انسانی بنیادوں پر امداد فراہمی کے حوالے سے مزید کام کرنے کی ضرورت ہے۔ نیز امدادی ٹیموں کے لیے کھڑی رکاوٹوں کو ختم کیا جائے۔ اس بات کو بھی یقینی بنایا جائے کہ غزہ تک امداد پہنچانے کے لیے کافی ٹرک موجود ہوں۔

بلنکن نے مزید کہا انسانی بنیادی ضروریات کی بھی فہرست مرتب کی جانی چاہیے تاکہ من مانی امدادی سامان کے ٹرکوں کو غزہ داخلے سے روکا جاسکے۔ واشنگٹن نے اسرائیل کو خبردار کیا ہے کہ رفح شہر پر حملے کے لیے آگے نہ بڑھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں