نیتن یاھو کمزور حماس کی غزہ میں حکمرانی کو ترجیح دیتے ہیں: اسرائیلی اخبار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

حماس اور اسرائیل کے درمیان جنگ بندی اور قیدیوں کی رہائی سےمتعلق بالواسطہ مذاکرات اور رفح پرحملے کے اسرائیلی اعلان کے جلو میں ایک اسرائیلی اخبار نے انکشاف کیا ہے کہ وزیراعظم بنجمن نیتن یاھو حماس کو ختم کرنے کے بجائے اسے کمزور کرنا چاہتے ہیں۔

اسرائیلی اخبار’یروشلم پوسٹ‘ کی رپورٹ کے مطابق اسرائیلی اخبار نے کہا ہے کہ "ایک سادہ ، لیکن تکلیف دہ حقیقت ہے کہ نیتن یاہو غزہ میں کمزور حماس کو اقتدار حاصل کرنے اور بین الاقوامی برادری کے متبادل سے بچنے کے لیے ترجیح دیتا ہے"۔

"ذاتی اور سیاسی وجوہات"

’یروشلم پوسٹ‘ کی رپورٹ کے مطابق غزہ میں جنگ ایک کمزور ردعمل کے ساتھ ختم ہوسکتی ہے۔ صرف اسی وجہ سے نیتن یاہو کمزور حماس جو اب بھی غزہ کو کنٹرول کرتی ہے کوترجیح دیتے ہیں۔ نیتن یاھو سیاسی اور ذاتی وجوہات کی بنا پر کسی بھی دوسرے ادارے کو غزہ کی نگرانی سونپنے کے حق میں نہیں تاہم وہ کیا سیاسی اور نجی مجبوریاں ہیں ان کی وضاحت نہیں کی گئی۔

اخبارنے مزید کہا کہ "حماس کمزور ہوچکی ہے لیکن وہ غزہ کی پٹی میں موجود ہے اور اسے کنٹرول کرتی ہے۔ نیتن یاہو کا خیال ہے کہ موجودہ صورت حال کو ایسے ہی رہنے دیا جائے اور کمزور حماس ہی کو غزہ کا اقتدار دیا جائے۔

اخبار لکھتا ہے کہ "نیتن یاہومیں منفی ذاتی خصوصیات کا ایک مجموعہ ہے لیکن حماقت ان میں سے ایک بھی نہیں۔ ان میں لوگوں کو سنبھالنے اور متوجہ کرنے بہت بڑا تجربہ ہے۔ لہٰذا حقیقت یہ ہے کہ اسرائیل نے غزہ میں زمینی جنگ کا خاتمہ کیا اور اکتوبر سے دسمبر 2023ء دباؤ کو ایک طرف کردیا۔ کیونکہ وہ جانتے ہیں کہ تمام تر جنگ کے باوجود حماس اب بھی غزہ میں موجود ہے اور یرغمالی بھی نہیں چھڑا جا سکے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں