رفح سے فلسطینیوں کا جبری انخلاء خطرناک ثابت ہوگا: حماس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

فلسطین کے جنگ سے تباہ حال علاقے غزہ کے جنوبی شہر رفح کے مشرقی علاقوں سے فلسطینیوں کےانخلاء کے اعلان پر حماس نے خبردار کیا ہے۔ حماس کے ایک سرکردہ رہ نما نے کہا ہے کہ رفح سے انخلاء خطرناک ثابت ہوگا اور جنگ بندی کے حوالے سے جاری مذاکرات بند ہوجائیں گے۔

"امریکہ ذمہ دار ہے"

انہوں نے امریکہ کو ذمہ دار ٹھہراتے ہوئے اس بات پر زور دیا کہ امریکی انتظامیہ اس دہشت گردی کے لیے قابض ریاست کے ساتھ ساتھ پوری طرح ذمہ دار ہے۔


امریکی ویب سائٹ "ایکسیس" کے مطابق حماس کے ایک اور رہ نما نے کہا کہ "ہم ایک معاہدے تک پہنچنے کے قریب تھے اور رفح کو خالی کرنے کے احکامات سے مذاکرات رک جائیں گے"۔

یہ بیانات اسرائیلی فوج کی جانب سے رفح کے مشرق میں متعدد محلوں کو خالی کرنے کے لیے شناخت کیے جانے کے بعد سامنے آئے ہیں، جن میں شہریوں سے خان یونس میں المواسی کی طرف جانے کاکہا گیا ہے۔

اس نے جن محلوں کو خالی کرنے کا مطالبہ کیا ان میں الشوقہ سے صوفہ کے ساتھ ساتھ النسار ہسپتال کے علاوہ السلم محلہ چوک سے المنتزہ اور عباد الرحمٰن مسجد چوک سے الفلوجہ، دیر یاسین اسٹریٹ اور تبت زرے سے الشعرا اسٹریٹ تک کے مقامات کو خالی کرایا گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں