غزہ : سینئیر فلسطینی ڈاکٹر اپنے ڈاکٹر بیٹے سمیت اسرائیلی بمباری سے جاں بحق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

غزہ میں شہریوں کے بنیادی حقوق اور تحفظ کے لیے سرگرم عمل ' غزہ سول ڈیفنس ایجنسی' نے اتوار کے روز اسرائیلی بمباری کے نتیجے میں دو ڈاکٹروں کی ہلاکت کی اطلاع دی ہے۔ اسرائیلی فوج نے تازہ بمباری دیر البلاح کے مرکزی علاقے میں کی ہے۔ بتایا گیا ہے کہ غزہ میں ایک سینئیر فلسطینی ڈاکٹر محمد نمر بمباری کے دوران اپنے ڈاکٹر بیٹے سمیت جاں بحق ہو گئے ہیں۔

کسی ہسپتال سے باہر اسرائیلی حملے کا نشانہ بن کر دو ڈکٹروں کی ہلاکت کا یہ واقعہ اس لیے منفرد ہے کہ دونوں ڈاکٹر بھی تھے اور باپ بیٹا بھی تھے۔ اور دونوں ایک ہی روز ایک ہی بمباری کے دوران اکٹھے جاں بحق ہو گئے ہیں۔

غزہ سول ڈیفنس ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق دونوں ڈاکٹروں کی لاشیں غزہ کے وسطی علاقے سے الاقصیٰ شہدا ہسپتال منتقل کر دی گئی ہیں۔ اقصیٰ شہدا ہسپتال دیر البلاح میں ہی واقع ہے۔

یہ رواں مہینے تیسرے ڈاکٹر کی ہلاکت کی خبر سامنے آئی ہے۔ اس سے قبل اسرائیلی جیل میں چار ماہ سے زیادہ عرصے سے قید رہنے والے الشفا ہسپتال کے آرتھو پیڈک کے شعبے کے سربراہ کی ہلاکت کی خبر بھی مئی کے شروع میں ہی سامنے آئی تھی۔

تاہم دو باپ بیٹا ڈاکٹروں کی اس طرح ہلاکت کی خبر غزہ سے سامنے آئی ہے۔ اسرائیلی فوج یا اس کے کسی ترجمان نے اس بارے میں ابھی تک کوئی بیان دیا ہے نہ رد عمل ظاہر کیا ہے۔ میڈیا کی طرف سے اس بارے میں پوچھنے پر بھی اسرائیلی فوج نے رد عمل دینے سے گریز کیا گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں