عراق میں متعین سعودی سفیر کا دورہ کربلا سرکاری اور عوامی توجہ کا مرکز

سفیر عبدالعزیز الشمری کے دورہ کربلا سے دونوں ممالک کے درمیان مذہبی ہم آہنگی کے فروغ اور ثقافتی اورسیاحتی تعلقات کو تقویت دینے میں مدد ملے گی۔

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

عراق میں تعینات خادم حرمین شریفین کے سفیرعبدالعزیز الشمری نے کل 13 مئی کو کربلا گورنری کا دورہ کیا جسے بڑے پیمانے پر سرکاری اور عوامی پذیرائی حاصل ہوئی ہے۔ کسی سعودی سفیر کا کربلا کایہ پہلا دورہ ہے جہاں ام حسین بن علی اوران کے بھائی ابوالفضل العباس کے مزارات ہیں۔ کربلا کو عقیدت کی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے اور ہر سال لاکھوں زائرین کربلا میں مزارات پر آتے ہیں۔

دوسری جانب سعودی سفیر کو عراق کے مذہبی اہمیت کے حامل تاریخی شہر کربلا کے دورے کو مملکت سعودی عرب اور عراق کے درمیان مذہبی بھائی چارےاور مذہبی ہم آہنگی کے فروغ کی کوششوں کے حصےکے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔

سفیر الشمری کا کربلا آمد پر شاندار استقبال کیا۔ گورنر کربلا انجینیر نصیف الخطابی اور صوبائی کونسل کے اراکین سمیت دیگر اعلیٰ حکام نے سعودی سفیر کا استقبال کیا۔

دوسری طرف عراقی میڈیا میں اس دورے کو خصوصی کوریج دی گئی ہے سعودی سفیر کے دورہ کربلا کو عراق اور سعودی عرب کے درمیان تعلقات کو مستحکم کرنے کی الشمری کی کوششوں کو سراہا گیا ہے۔ سوشل میڈیا پر صارفین کا کہنا ہے کہ سعودی سفیر عبدالعزیز الشمری کا دورہ کربلا بغداد اور ریاض کے درمیان تعلقات کو مزید مستحکم کرنے کی مساعی کا حصہ ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کو مقامی میڈیا کے ذریعے ملنے والی معلومات سے پتا چلتا ہے کہ اس دورے کا اہتمام چند ہفتے قبل کیا گیا تھا۔جب عراقی حکام سے اس دورے کے موضوع کے بارے میں رابطہ کیا گیا تو نہ صرف کربلا کے سرکاری اداروں کی جانب سے بہت خوش آمدید کہا گیا بلکہ کربلا میں "مذہبی اتھارٹی" نے بھی سعودی سفیر کی آمد کا خیرمقدم کیا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے ذریعے رابطہ کرنے والے "مذہبی اتھارٹی" کے حلقوں کے قریبی ایک نجی ذریعے نے کہا کہ "اس دورے سے ایک وسیع مثبت ماحول پیدا ہوا۔ یہ دورہ سعودی عرب کی اعتدال پسند اور فراخ دلانہ پالیسی کی عکاسی کرتا ہے کیونکہ مملکت سعودی عرب خطے کے ممالک اور عالمی سطح پر تمام طبقات کے ساتھ تعلقات کو مستحکم کرنے کی کوشش کررہی ہے۔

ذریعے نے کہا کہ سعودی سفیر کا دورہ کربلا بین الاقوامی مذہبی ہم آہنگی اور انتہا پسند عناصر کی سوچ کی نفی کرتی ہے جو سعودی عرب پر مذہبی منافرت کا الزام عائد کرتے ہوئے عراق اور سعودی عرب کے درمیان دو طرفہ تعلقات کمزور کرنا چاہتے ہیں۔

سفیر عبدالعزیز الشمری کا کربلا کا دورہ سعودی سول ایوی ایشن اتھارٹی کی جانب سے 26 اپریل کو مملکت کے مشرق میں واقع شہر دمام سے یکم جون سے عراقی شہر نجف کے لیے براہ راست پروازیں شروع کرنے کے اعلان کے بعد آیا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کو حاصل کردہ معلومات سے پتہ چلا ہے کہ سعودی سفیر عبدالعزیز الشمری ممکنہ طور پر دمام سے نجف آنے والی پہلی پروازوں میں سفر کریں گے جہاں سے ایک عراقی گروپ سعودی عرب کا سفر کرے گا۔

نجف کی اپنی ایک خاص روحانی حیثیت بھی ہے کیونکہ یہ "الحوزہ العلمیہ" کا صدر مقام ہے اور اس میں امام علی بن ابی طالب کا مزار اور متعدد ورثہ، ثقافتی اور علمی و فقہی مراکز شامل ہیں

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں