سعودی اور برطانوی اداروں کے اشتراک سےمشترکہ ثقافتی فنون کو متعارف کرانے کی مہم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے رائل انسٹی ٹیوٹ آف ٹریڈیشنل آرٹس "ورث" نے سعودی روایتی فنون کی نمائش اور انہیں مقامی اور بین الاقوامی سطح پرمتعارف کروانے کے لیے ایک مخصوص مہم کا آغاز کیا ہے۔ اس مہم کو سعودی عرب اور برطانیہ "دونوں مملکتوں کی میراث" کا عنوان دیا گیا ہے۔ اس مہم کا مقصد سعودی آرٹس اور برطانیہ کے فنون کو ایک ساتھ ریاض جاری 'دی گریٹ فیوچر' اقدام کے تحت سعودی اور برطانوی کاریگروں کی شرکت کے ذریعے دونوں ممالک کے روایتی فنون اور ان کے درمیان مماثلت اور فرق کو اجاگر کرنا ہے۔ یہ اقدام کل 14 مئی کو ریاض میں شروع ہوا اور آج اس کا دوسرا دن ہے۔ کل جمعرات 16 مئی کو یہ نمائش برطانوی دارالحکومت لندن میں وکٹوریہ اینڈ البرٹ میوزیم میں ایک نمائش کی شکل میں ہوگی جب کہ 18مئی کو دوبارہ ریاض میں انسٹیٹوٹ کے صدر دفتر میں ہوگی۔

یہ مہم مملکت میں روایتی فنون کو اجاگر کرنے اورانہیں تمام مقامی اور بین الاقوامی فورمز میں اجاگر کرنے کے لیے ورث کی جاری کوششوں کو ظاہر کرتی ہے، جس میں ووڈ آرٹ پر متعدد ورکشاپس، "نجدی دروازے" اور سدو آرٹ کا لائیو شو، ریاض میں کنگ عبداللہ فنانشل سینٹر "کافد" میں کمیونٹی آرٹ ورک کی نمائش میں جنریشن 2030 کے تعاون سے ورث لندن کرافٹس ویک میں حصہ لینا ہے، جس میں لکڑی کے دروازے بنانے کے فن پر ورکشاپ کے ذریعے تاریخی وکٹوریہ اور البرٹ میوزیم میں دستکاری کی نمائش ہوتی ہے۔

برطانوی آرٹس کی سطح پر 'ورث' اپنے ہیڈ کوارٹر ریاض کے الفوطہ کالونی میں برطانوی آرٹسٹ ہیریئٹ فرانسس کی میزبانی کر رہا ہے، تاکہ زیورات کی کڑھائی کے فن پر ایک مربوط ورکشاپ کا انعقاد کیا جا سکے۔ یہ نمائش فنون لطیفہ میں دلچسپی رکھنے والوں کو زیورات کے ڈیزائن کرنے کا موقع فراہم کرے گی۔

ورث کے زیر اہتمام سعودی-برطانوی ثقافتی تبادلے کی مہم 21 مئی کو ثقافتی تنوع کے عالمی دن کے موقع پر شروع کی گئی ہے۔ یہ ادارہ اس موقع سے فائدہ اٹھاتے ہوئے روایتی فنون کو پھیلانے اور انہیں عالمی سطح پر متعارف کرانے اور معاشروں کے درمیان انسانی ثقافتی اقدارکی طرف توجہ مبذول کرانے میں اپنا حصہ ڈالتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں