اہالیان غزہ کے لیے اپنی سرحدیں کھول دے،جواب میں انکار: اسرائیل کا مصر سے مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مصر اور اسرائیل کے درمیان تعلقات میں کشیدگی کے جلو میں اسرائیلی افواج نے رفح بارڈر کراسنگ کے فلسطینی حصے کا کنٹرول سنبھال رکھا ہے اور رفح شہر کے مشرق میں اسرائیلی ٹینکوں کی وسیع دراندازی کرکے اسرائیلی حکومت نے آگ میں ایندھن ڈال دیا۔

اسرائیلی حکومت کے ترجمان ڈیوڈ منسر نے بدھ کے روز اعلان کیا کہ ان کے ملک نے مصر سےکہا ہے کہ وہ فلسطینی شہریوں کے لیے جو جنگ سے بھاگنا چاہتے ہیں، اپنی سرزمین میں داخل ہونے کا راستہ کھول دے، لیکن قاہرہ نے انکار کر دیا۔

"ہم حماس کو ختم کر دیں گے"

انہوں نے "رفح میں حماس کے باقی چار بریگیڈز" کو ختم کرنے کے اپنے ملک کے عزم کی بھی تجدید کرتے ہوئے مزید کہا کہ حماس کے تمام ارکان کا خاتمہ ضروری ہے۔

گذشتہ دو دنوں کے دوران قاہرہ اور تل ابیب نے پش بیک اور ردعمل کا تبادلہ کیا ہے۔ اسرائیلی وزیر خارجہ یسرائیل کاٹز کی جانب سے مصرپر رفح کراسنگ کو بند کرنے اور اس طرح امداد کے داخلے میں رکاوٹ ڈالنے کا الزام عائد کیا مگر مصری وزیرخارجہ سامح شکری نے کہا ہے کہ رفح کراسنگ میں امداد کی بندش کا ذمہ دار اسرائیل خود ہے۔

مصر نے گذشتہ چند دنوں میں رفح میں زمینی دراندازی کو مسترد کرنے،بے گھر لوگوں سے بھرے سرحدی شہر پر حملے کی بار بارمخالفت کی ہے جہاں بڑی تعداد میں فلسطینی پناہ لیے ہوئے ہیں۔

حالیہ عرصے کے دوران قاہرہ نے رفح پر حملے پر شدید احتجاج کرتے ہوئے کہا کہ اس کارروائی سے امن معاہدے کو خطرہ لاحق ہے اور بعض مصری حکام نے سفارتی تعلقات کم کرنے اور سفیر کو تل ابیب سے واپس بلانے کی دھمکی دی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں