رفح حملہ روکنے کے عالمی عدالت انصاف کے فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہیں: سعودی عرب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب نے عالمی عدالت انصاف کے جاری کردہ اس فیصلے کا خیرمقدم کیا ہے جس میں اس نے اسرائیل کو نسل کشی کے جرم کی روک تھام اور سزا کے کنونشن کے مطابق رفح میں فوجی حملے یا کسی بھی دوسری کارروائی کو فوری طور پر روکنے کا حکم دیا ہے۔

سعودی وزارت خارجہ نے ایک بیان میں کہا کہ مملکت سعودی عرب اس فیصلے کو سراہتی ہے جو فلسطینی عوام کے اخلاقی اور قانونی حق کے لیے ایک مثبت قدم ہے۔ تاہم سعودی عرب اس کے ساتھ ہی فلسطینیوں کا احاطہ کرنے والی تمام بین الاقوامی قراردادوں کی اہمیت پر بھی زور دیتا ہے۔ سعودی عرب نے عالمی برادری سے اپنے اس مطالبے کی تجدید بھی کی کہ وہ فلسطینی عوام کے خلاف ہر قسم کی جارحیت کو روکنے کے لیے اپنی ذمہ داریاں ادا کرے۔

یاد رہے جمعہ 24 مئی کو اقوام متحدہ کے اعلیٰ ترین عدالتی ادارے انٹرنیشنل کورٹ آف جسٹس نے اسرائیل کو غزہ کی پٹی کے جنوبی علاقے رفح میں اپنا فوجی حملہ روکنے کا حکم دیا۔ اس فیصلے کے باعث 7 ماہ سے زائد عرصے کے بعد جنگ بندی تک پہنچنے کے لیے عالمی دباؤ میں اضافہ ہوگا۔

نیدر لینڈز کے دارالحکومت دی ہیگ میں قائم عالمی عدالت نے کہا کہ اسرائیل کو فوری طور پر اپنا فوجی حملہ اور رفح گورنری میں کسی بھی دوسرے ایسے اقدام کو روک دینا چاہیے جو غزہ کی فلسطینی آبادی پر زندگی کے کٹھن حالات مسلط کرے یا کسی گروہ کے تباہی کا باعث بن سکے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں