اسرائیلی فوج کا جنوبی لبنان میں حزب اللہ کے خفیہ ٹھکانے پربمباری کا دعویٰ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی فوج نے کہا ہے کہ اس نے کل اتوار کی شام جنوبی لبنان کے علاقے یارون میں حزب اللہ کے ارکان کے خفیہ ٹھکانے پر بمباری کی۔ انہوں نے ٹیلی گرام پر ایک بیان میں مزید کہا کہ فضائیہ نے حولہ قصبے میں حزب اللہ کے ارکان کو بھی نشانہ بنایا۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ فوج نے جن اہداف کو نشانہ بنایا ان میں میس الجبل میں ہتھیاروں کا ذخیرہ کرنے کی سہولت اور خیام میں فوجی انفراسٹرکچر شامل ہے۔

سات اکتوبر کو غزہ کی پٹی پر اسرائیلی جنگ کے آغاز کے ساتھ ہی ایک طرف اسرائیلی فوج اور دوسری طرف لبنان میں حزب اللہ گروپ اور مسلح فلسطینی دھڑوں کے درمیان تقریباً روزانہ کی بنیاد پر سرحد پار گولہ باری شروع ہو گئی۔

نیشنل نیوز ایجنسی اور ایران نواز جماعت کے مطابق اتوار کو جنوبی لبنان کو نشانہ بنانے والے اسرائیلی حملوں میں حزب اللہ کے پانچ ارکان اور دو شہری مارے گئے۔

لبنان کی سرکاری قومی خبر رساں ایجنسی نے اطلاع دی ہے کہ اسرائیلی چھاپوں نے جنوبی لبنان کے تین دیہاتوں حولہ، ایتا الشعب اور ناقورہ میں موٹرسائیکلوں کو نشانہ بنایا۔

ایجنسی نے وضاحت کی کہ اسرائیلی بمباری کی وجہ سے کئی جگہوں پر آگ بھڑک اٹھی۔ لبنانی میڈیا نے دعویٰ کیا ہے کہ اسرائیلی فوج کی طرف سے ان علاقوں پر بمباری کے لیے فاسفورس گولہ بارود کا استعمال کیا ہے۔

اسرائیلی فوج نے ایک بیان میں اعلان کیا کہ اس نے حزب اللہ کے دو ارکان کو اس وقت نشانہ بنایا جب وہ ایتا الشعب کے علاقے میں سرگرم تھے۔ اس سے قبل حزب اللہ کے پانچ جنگجوؤں کو ہلاک کیا گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں