ایران میں آئی فون کے نئے ماڈلز پر پابندی ، صارفین پریشان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایران میں آئی فون کے نئے ماڈلز پر پابندی لگنے کے بعد آئی فون صارفین پریشان ہیں۔ تہران میں واقع ایک کیفے میں بیٹھا حامد نامی نوجوان اس امید پر اپنے فون کو لہراتا ہے کہ سگنل آجائیں گے۔

آئی فون 14 اور 15 سیریز پر ایران میں لگنے والی پابندی بعد فروری 2023 میں حامد نے آئی فون خریدا تھا۔ اسے امید تھی کہ یہ پابندیاں ختم ہو جائیں گے لیکن ایسا نہیں ہوا۔

32 سالہ حامد نے بین الاقوامی خبر رساں ادارے 'اے ایف پی' سے بات کرتے ہوئے کہا 'صرف ایک ماہ کے لیے میرے پاس نیٹ ورک کوریج تھی۔ اس کے بعد وہ بھی چلی گئی۔ تھری جی نیٹ ورک پر منتقل کرنے سے شاید مجھے نیٹ ورک دوبارہ مل سکیں۔'

ایران میں آئی فون ماڈلز پر لگنے والی پابندی کے بعد آئی فون صارفین کو اپنی ڈیوائسز کو رجسٹر کرانا ہوگا۔ ڈیوائسز کی رجسٹریشن سے متعلق پابندی ایران میں رہنے والے آئی فون صارفین اور سیاحوں دونوں پر عائد ہوتی ہے۔ ڈیوائسز کی رجسٹریشن کے بعد صارفین ایک ماہ سے زائد عرصے تک ایران کی مقامی سم استعمال کر سکیں گے۔

ایرانی خبر رساں ادارے کی مارچ 2023 میں سامنے آنے والی رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ حکام کے مطابق اس فیصلہ کا مقصد غیر ملکی کرنسی کے اخراجات کم کرنا تھا۔ تاہم آئی فون ڈیوائسز ایک 'سٹیٹس سمبل' اور ٹیکنالوجی کی وجہ سے اہمیت کی حامل ہیں۔'

سرکاری طور پر لگنے والی پابندیوں کے بعد آئی فون کے پرانے ماڈلز کی قیمتوں میں اضافہ دیکھنے میں آیا تھا۔ خیال رہے واشنگٹن کے جوہری معاہدے 2018 سے دستبرداری کے بعد بھی ایپل کمپنی نے باضابطہ طور پر ایران میں موجودگی کو یقینی نہیں بنایا تھا۔

جس سے مختلف سکیموں کے ذریعے سستے آئی فون خریدنے کی لالچ دے گئی۔ 'کوروش' نامی کمپنی نے آئی فون کی قیمت 340 ڈالر تک کر دی۔ فروری میں روزنامہ جاون کی شائع کردہ رپورٹ میں کہا گیا 'کوروش' نے 35 ملین ڈالر تک جمع کیے ہیں۔

ایرانی خبر رساں ادارے کے مطابق تہران اور دیگر شہروں میں آئی فون سے متعلق ہونے والے فراڈز کے 5 ہزار مقدمات سامنے آئے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں