حوثیوں نے طیارہ بردار بحری جہاز آئزن ہاور کو نشانہ نہیں بنایا: امریکی عہدیدار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یمن کے حوثی گروپ کے فوجی ترجمان یحیی سریع نے ایک ٹی وی بیان میں کہا ہے کہ حوثی گروپ نے صنعا، حدیدیہ اور تعز کے علاقوں میں حوثی ٹھکانوں پر امریکی-برطانوی حملوں کے جواب میں بحیرہ احمر میں امریکی طیارہ بردار بحری جہاز آئزن ہاور پر میزائل حملہ کیا ہے۔ بیان میں کہا گیا کہ حوثی میزائل فورس اور بحری قوت نے ایک مشترکہ فوجی آپریشن میں بحیرہ احمر میں امریکی طیارہ بردار بحری جہاز آئزن ہاور کو نشانہ بنایا ہے۔ یہ کارروائی متعدد پروں والے میزائلوں اور بیلسٹک میزائلوں سے انجام دی گئی ہے۔

حوثیوں نے 16 افراد کی ہلاکت کا سبب بننے والے امریکی اور برطانوی حملوں کے جواب میں میری ٹائم نیویگیشن پر حملے تیز کرنے کا عزم ظاہر کیا ہے۔ ایک امریکی عہدیدار نے ’’العربیہ‘‘ سے بات کرتے ہوئے حوثی عہدیدار کے بیانات کی تردید کردی اور کہا کہ ایزن ہاور طیارہ بردار بحری جہاز کو نشانہ نہیں بنایا گیا ہے۔

حوثی عہدیدار محمد البخیتی نے پلیٹ فارم ’’ایکس‘‘پر ایک پوسٹ میں کہا کہ یہ بمباری ہمیں اپنی فوجی کارروائیوں کو جاری رکھنے سے نہیں روکے گی۔ ہم بڑھتے ہوئے تناؤ کا مقابلہ کریں گے۔ انہوں نے تصدیق کی کہ امریکی برطانوی حملوں میں میں ریڈیو، بندرگاہوں اور ذرائع مواصلات کو نشانہ بنایا گیا۔ حوثیوں کے مطابق امریکی اور برطانوی لڑاکا طیاروں نے مغربی یمن پر رات کے وقت حملے کیے۔ ان حملوں میں 16 افراد جاں بحق اور 30 سے زیادہ زخمی ہوگئے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں