سعودی عرب اور برازیل کے درمیان دفاعی تعاون کا معاہدہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے وزیر دفاع شہزادہ خالد بن سلمان اور برازیل کے نائب صدر اور وزیر صنعت، تجارت اور سروسز جیرالڈو الکمن نے ریاض میں سعودی عرب اور وفاقی جمہوریہ برازیل کے درمیان دفاعی تعاون کے معاہدے کے مسودے پر دستخط کیے۔

اس معاہدے کا اعلان شہزادہ خالد بن سلمان کی مسٹر جیرالڈو الکمن کے ساتھ ملاقات کے موقعے پر کیا گیا۔ اس دوران انہوں نے دونوں دوست ممالک کے درمیان دوطرفہ تعلقات، دفاعی صنعتوں، تحقیق اور ترقی کے شعبے میں تعاون کو مضبوط بنانے اور ٹیکنالوجی کی منتقلی اور لوکلائزیشن پر تبادلہ خیال کیا۔

سعودی پریس ایجنسی ’ایس پی اے‘ کےمطابق دونوں رہ نماؤں نے علاقائی اور بین الاقوامی حالات میں پیشرفت اور سعودی عرب کے وژن 2030 پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

دونوں ممالک کے درمیان دوطرفہ تعلقات کی تاریخ 50 سال سے زیادہ پرانی ہے، جب کہ مملکت سعودی عرب اور برازیل کے درمیان اقتصادی تعلقات ایک قابل ذکر مقام پر ہیں۔ دونوں ممالک نے دو طرفہ اقتصادی تعلقات کو بہتر بنانے کے لیے ان تھک کوششیں کیں۔ دونوں ممالک گروپ آف ٹوئنٹی کے رکنیت رکھتے ہیں اور گروپ کے ممالک کی مشترکہ ترجیحات کے حصول کے لیے کوششوں کو مربوط کرنے کے لیے کام کرتے ہیں۔

برازیل بھی برکس گروپ کا رکن ہے۔ سعودی عرب بھی اب برکس کا رکن ہے۔ دونوں ممالک کے درمیان تجارتی تبادلہ دو طرفہ تعلقات کے اہم ترین ستونوں میں سے ایک ہے۔ گذشتہ سال دونوں ممالک کے درمیان تجارتی توازن کا پلڑا سعودی عرب کی طرف جھک گیا تھا۔ سعودی عرب کی برازیل کے لیے برآمدات 830 ملین ڈالر تک پہنچ گئیں جب کہ برازیل کی سعودی عرب کے ساتھ برآمدات کا حجم 4.456 ارب ڈالر ہے۔

اس میں 1.14 ارب ڈالر غیر تیل کی برآمدات شامل ہیں، جب کہ برازیل سے درآمدات 3.62 ارب ڈالر کی اہم ترین سعودی اشیا کی برآمدات کی فہرست میں معدنیات، کھاد، پلاسٹک اور ایلومینیم کی مصنوعات اور نامیاتی کیمیائی مصنوعات شامل ہیں۔

دوسری جانب غزہ کی پٹی میں اسرائیلی فوج کی بڑھتی ہوئی کارروائیوں پر سعودی عرب اور برازیل کا ایک ہے اور دونوں ممالک غزہ میں فوری جنگ بندی کے مطالبے پر ایک صفحے پر ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں