نیم برہنہ حالت میں قید میں مشہور ہونے والے حمزہ ابو حلیمہ کا اسرائیل کو پیغام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

چند ماہ قبل اسرائیلی فوج کی حراست میں ایک فلسطینی کی تصویر وائرل ہوئی تھی جس میں اسے نیم برہنہ حالت میں اور ہاتھ پاؤں باندھے ہوئے دکھایا گیا تھا۔ اس تصویر نے غیرمعمولی توجہ حاصل کی اور اسے فلسطینیوں کو ہراساں کرنے کی اسرائیلی پالیسی کے طور پر دیکھا گیا۔

یہ فلسطینی حمزہ حلیمہ ہے جس نے رہائی کے بعد کہا کہ اسرائیل کو یہ پیغام ضرور پہنچانا چاہیے کہ تم ہمارے دشمن ہو کیونکہ تم ہماری سرزمین پرقابض ہو، ہماری سرزمین سے نکل جاؤ توتم ہمارے دشمن نہیں رہوگے‘‘۔

انہوں نے مزید کہا کہ "اسپین کے یہودی ہمارے دشمن نہیں ہیں۔ وہ ہمارے دوست ہیں، لیکن تم میری سرزمین پر قابض ہو اور تم میرے بچوں کو قتل کر رہے ہو اور ہمارے گھروں کو مسمار کر رہے ہو، اس لیے تم میرے دشمن ہو"۔

انہوں نے مزید کہا کہ "ہم کمزور ہیں، لیکن ہم خدا کے سامنے مضبوط ہیں۔ فتح قریب ہے"۔

غیر انسانی سلوک

حمزہ ابو حلیمہ کی تصویر جسے ایک اسرائیلی فوجی نے گذشتہ فروری میں اپنے فیس بک اور انسٹاگرام اکاؤنٹس پر پوسٹ کیا تھا، نے اسرائیلی رویے پر تنقید کا باعث بنی اور اسے جسے غیر انسانی اور شرمناک قرار دیا گیا۔

اسرائیلی فوج نے دسمبر 2023ء میں حمزہ کو یرموک محلے میں اس کے رشتہ داروں کے گھر پر حملہ کرنے کے بعد گرفتار کرلیا تھا۔ حمزہ ٹانگ میں شیل لگنے سے زخمی بھی تھا۔ اسرائیلی فوج نے اس کے کپڑے اتار دیے دیے اور اسے شہر کے مشرق میں واقع یرموک علاقے سے مغرب میں"فلسطین اسٹیڈیم‘‘ منتقل کردیا گیا تھا۔

حمزہ سے تقریباً 4 گھنٹے تک سخت پوچھ گچھ کی گئی۔ بعد میں اسے رہا کردیا گیا تھا

فوج نے اس تصویر پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا تھا کہ دیا کہ زیر حراست شخص کو رہا کیا گیا کیونکہ اس کے خلاف کوئی الزامات ثابت نہیں ہوئ

اس نے مزید کہا کہ جس سپاہی نے تصویر پوسٹ کی تھی وہ ریزرو فورسز سے ہے۔ اس خلاف ورزی کی وجہ سے اسے ملازمت سے فارغ کر دیا گیا ہے

فوج نے بتایا کہ یہ تصویر شمالی غزہ میں الرمل محلے کے ایک اسکول کے اندر لی گئی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں