یمن کے حوثیوں کا بحیرۂ احمر میں دو بحری جہازوں پر حملہ

ایلبیلا اور آل جینوآ جہازوں کو ڈرونز اور بیلسٹک میزائلوں سے نشانہ بنایا گیا: حوثی ترجمان یحییٰ سریع

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

ایران سے منسلک حوثی گروپ کے فوجی ترجمان یحییٰ سریع نے جمعہ کو کہا کہ یمن کے حوثی باغیوں نے بحیرۂ احمر میں دو بحری جہازوں کو نشانہ بنانے والی دو فوجی کارروائیاں کیں۔

یمن کے گنجان آباد ترین علاقوں پر کنٹرول کرنے والی حوثی ملیشیا غزہ میں اسرائیل کے خلاف لڑنے والے فلسطینیوں کے ساتھ اظہارِ یکجہتی کے لیے کئی مہینوں سے ملک کے پانیوں میں تجارتی بحری جہازوں پر حملے کر رہی ہے۔

سریع نے ایک ٹیلی ویژن تقریر میں کہا کہ ایلبیلا اور آل جینوآ جہازوں کو "متعدد ڈرونز اور بیلسٹک اور بحری میزائلوں سے نشانہ بنایا گیا۔"

سریع نے اس تاریخ کی وضاحت نہیں کی جب کارروائی کی گئی۔ رائٹرز کو جمعہ کو بحیرۂ احمر میں ہونے والے واقعات کی کوئی اطلاع موصول نہیں ہوئی۔

بحیرۂ احمر میں مہینوں سے جاری حوثی حملوں نے عالمی جہاز رانی میں خلل پیدا کیا ہے جس سے تجارتی کمپنیاں راستہ بدلنے اور جنوبی افریقہ کے گرد گھوم کر طویل تر اور زیادہ مہنگا سفر کرنے پر مجبور ہو گئی ہیں۔ اور ان حملوں سے یہ خدشہ بھی پیدا ہوا ہے کہ اسرائیل-حماس جنگ وسیع تر شرقِ اوسط میں پھیل کر خطے کو عدم استحکام کا شکار کر سکتی ہے۔

امریکہ اور برطانیہ نے بحری جہاز رانی پر حملوں کے جواب میں حوثی اہداف کے خلاف حملے کیے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں