.

پاکستان کی 15 رکنی نگران کابینہ کا اعلان

پنجاب سے 7، بلوچستان اور سندھ سے 3، 3 اور خیبر پختونخوا سے 2 وزراء شامل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کے نگران وزیراعظم میر ہزار خان کھوسو نے سوموار کی رات اپنی پندرہ رکنی کابینہ کا اعلان کردیا ہے۔نئی کابینہ آج منگل کو اسلام آباد میں صدر آصف علی زرداری سے حلف لے گی۔

میر ہزار خان کھوسو نے نگران کابینہ کے لیے ایک ہفتے تک مشاورت کی ہے اور انھوں نے بالآخر اپنی پسند کے پندرہ وزراء کا انتخاب کر لیا ہے۔اس نگران کابینہ میں معروف صحافی عارف نظامی بھی شامل ہیں اور توقع ہے انھیں وزارت اطلاعات کا قلمدان سونپا جائے گا۔

وزیراعظم ہاؤس کے ترجمان کے مطابق میر ہزار خان کھوسو نے جن پندرہ شخصیات کو نگراں کابینہ کے لیے منتخب کیا ہے،ان میں سات کا تعلق پنجاب ، تین کا سندھ، تین کا بلوچستان اور دو کا صوبہ خیبرپختونخوا سے ہے۔ صوبہ پنجاب سے ملک حبیب، ڈاکٹر مشتاق خان، احمر بلال صوفی ،ڈاکٹر مصدق ملک، عارف نظامی،شہزادہ احسن اشرف شیخ اور شہزادہ جمال کو نگران کابینہ میں شامل کیا گیا ہے۔

سندھ سے سہیل وجاہت صدیقی، مقبول ایچ رحمت اللہ اور ڈاکٹر یونس سومرو نگران کابینہ میں شامل ہیں۔ بلوچستان سے عبدالمالک کاسی، اسداللہ مندوخیل اور میر حسن ڈومکی کو وزیر بنایا گیا ہے۔ صوبہ خیبرپختونخوا سے ڈاکٹر ثانیہ نشتر اور ڈاکٹر فیروز جمال شاہ کاکاخیل شامل ہیں۔عبدالمالک کاسی سابق صدر پرویز مشرف کے دور میں بھی وفاقی وزیر(صحت) رہ چکے ہیں۔

ان وزراء کے محکموں کا اعلان حلف برداری کے بعد کیا جائے گا۔نگران کابینہ آئین کے تحت آیندہ ماہ عام انتخابات کے انعقاد اور نئی منتخب حکومت کے اقتدار سنبھالنے تک امور مملکت چلائے گی اور وہ دوررس نتائج کے حامل فیصلے کرنے کی مجاز نہیں ہوگی۔

نگران وزیراعظم نے دو اور معروف صحافیوں طلعت حسین اور ڈاکٹر ملیحہ لودھی کو بھی اپنی کابینہ میں شامل ہونے کی پیش کش کی تھی لیکن ان دونوں نے وزیر بننے سے انکار کردیا تھا۔طلعت حسین کو وزارت اطلاعات اور ڈاکٹر ملیحہ لودھی کو وزیر خارجہ بنانے کی پیش کش کی گئی تھی۔ موخرالذکر خاتون صحافیہ امریکا میں پاکستان کی سفیر بھی رہ چکی ہیں۔ایک اور صحافی نجم سیٹھی پہلے ہی پنجاب کے نگران وزیراعلیٰ بن چکے ہیں۔