.

بے بھٹو قتل کیس کے سرکاری وکیل فائرنگ سے جاں بحق

مقتول نے آج انسداد دہشت گردی عدالت میں پیش ہونا تھا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کی سابق وزیراعظم بینظیر بھٹو کی قتل کے مقدمے میں سرکاری وکیل اور وفاقی تفتیشی ادارے [ایف آئی اے] کے پراسیکوٹر چوہدری ذوالفقار علی کی گاڑی پر موٹرسائکل پر سوار نامعلوم افراد کی جانب سے فائرنگ کی گئی جس کے نتیجے میں چوہدری ذوالفقار علی جاں بحق ہوگئے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق جاں ہونے والوں میں ایک راہ گیر خاتون بھی شامل ہیں۔

چوہدری ذوالفقارعلی اور اُن کے گارد پر حملہ جمعہ کو علی الصباح اسلام آباد کے سیکٹر جی نائن میں کیا گیا۔ اسی سیکٹر میں ایف آئی اے کا مرکزی دفتر بھی واقع ہے۔ حملے کے بعد چوہدری ذوالفقار کو قریب واقع پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف میڈٰیکل سائنسز [پمز] لیجایا گیا تھا جہاں وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے خالق حقیقی سے جا ملے۔ ہسپتال انتظامیہ کے مطابق مرحوم کو 12 گولیاں لگیں۔ چوہدری ذوالفقارعلی کوماضی میں متعدد بار قتل کی دھمکیاں ملی چکی تھیں۔

یاد رہے کہ چوہدری ذوالفقار علی کو آج انسددِ دہشت گردی کی عدالت میں پیش ہونا تھا جبکہ اس ہی کیس میں اپنی ضمانت کے لیے دائر کی گئی درخواست کے سلسلے میں سابق فوجی صدر پرویز مشرف کی بھی پیشی تھی۔